Urdu Dilchasp Kahani - Anokhi Shart - انوکھی شرط - دلچسپ کہانی

anokhi-shart-dilchasp-kahani

Sabaq Amoz Urdu Dilchasp Kahani - Anokhi Shart - Shehzadi Sana Aur Azam - Urdu Hindi Story

ایران کا بادشاہ بہت دنوں سے پریشان تھا۔ یوں تو ہر طرف خوش حالی کا دور تھا ، مگر بادشاہ کی پریشانی کی وجہ اس کی اکلوتی بیٹی شہزادی ثنا تھی۔ ہر باپ کی طرح بادشاہ بھی اپنی بیٹی کی شادی کر کے اپنے فرض سے دوش ہونا چاہتا تھا، لیکن شہزادی ثنا نے بھی عجیب اعلان کر رکھا تھا کہ جو شخص اس سوالوں کے درست جواب دے گا وہ اس سے شادی کرے گی۔ 
آس پاس کی ریاستوں کے کئی شہزادے آئے مگر نا کام لوٹ گئے۔ اس ملک میں نوجوان طالب علم بھی رہتا تھا ، اس کا نام اعظم تھا ۔ اس نے اپنے والد سے کہا کہ وہ بھی اپنی قسمت آزما نا چاہتا ہے۔ اعظم کے والد اُستاد تھے اور کئ برسوں سے لوگوں میں علم کی روشنی بانٹ رہے تھے۔ ملک فارس کا وزیراعظم ، بڑے بڑے درباری اور شہر کا قاضی بھی ان کا شاگرد تھا۔ باپ نے بیٹے کی خواہش دیکھی تو بولے: بیٹا ! اگر تو نا کام لوٹا تو تیرا کچھ نہیں جائے گا ، لوگ کیا کہیں گے کہ ایک استاد کا بیٹا نا کام ہوگیا۔ اعظم اپنے باپ سے کہنے لگا : بابا ! بڑے بڑے شہزادے لوٹ گئے۔ اگر میں بھی نا کام ہو گیا تو کیا ہوا، یہ تو مقابلہ ہے جو بھی جیت لے اور شاید وہ خوش نصیب میں ہی ہوں۔ آخر باپ کو بیٹے کی ضد ماننی پڑی۔ اعظم خوشی خوشی محل کی طرف چل پڑا۔
شہر بھر میں یہ خبر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی کہ ایک عالم کا بیٹا قسمت آزمانے محل میں چلا آیا ہے۔ مقررہ وقت پر محل لوگوں سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا ۔ بادشاہ تخت پر بیٹھا تھا ۔ ملکہ عالیہ بھی محل میں موجود تھیں ۔ وزیر ، امیر ، درباری ، اور عوام الناس سب دربار میں موجود تھے۔ آخر شہزادی نے اپنا پہلا سوال کر ڈالا۔ اُس نے شہادت کی انگلی فضا میں بلند کی۔ اعظم نے کچھ دیر توقف کیا اور پھر شہادت والی انگلی کے ساتھ والی اگلی بھی فضا میں بلند کی ۔ یہ دیکھ کر شہزادی مسکرا اٹھی اور ملکہ عالیہ بولی : شاباش ، اے نوجوان ! تم پہلا مرحلہ کام یابی سے طے کر گئے ہو۔دوسرے سوال کے لیے شہزادی کرسی سے اٹھی اور ہاتھ میں تلوار لے کر ہوا میں چلانے لگی ۔ کچھ دیر بعد وہ دوبارہ اپنی نشست پر آکر بیٹھ گئی ۔بادشاہ سمیت ہر درباری کی نظر اعظم پر تھی ۔ اعظم کھڑا ہوا اور اپنی جیب سے قلم نکال کر فضا میں بلند کردیا۔ شاباش اے نوجوان ! ہم خوش ہوئے ۔ یہ جواب بھی درست ہے ۔ ملکہ عالیہ کی آواز دربار میں ابھری۔ اسی کے ساتھ دربار ، مبارک ہو ، مبارک ہو ، کی آواز سے گونج اٹھا ۔ دوسوالات کیا تھے ؟ ان کے جوابات کیا تھے ، اب ہر شخص اس پر غور کر رہا تھا کہ شہزادی نے کیا پوچھا اور اعظم نے کیا جواب دیا ؟ لوگوں کے لیے یہ ایک راز تھا ۔ آخر شہزادی نے تیسرا سوال کر ڈالا۔ وہ تیزی سے سیڑھیاں اُتری اور تیزی سے سیڑھیاں چڑھ کر دوبارہ اپنی نشست پر بیٹھ گئی۔ یہ بڑا عجیب و غریب سوال تھا۔ ہر طرف خاموشی تھی۔ لوگوں کی سانسیں رُکی ہوئی تھیں ۔ اب تو اعظم کے ہاتھ پاؤں ٹھنڈے ہوئے جا رہے تھے ۔ آخر اعظم کھڑا ہوا اور اپنے دل پر ہاتھ رکھ کر شہزادی کی طرف دیکھنے لگا ۔ مرحبا ، مرحبا اے نوجوان ! مبارک ہو ! شہزادی نے تمھیں پسند کر لیا ہے۔ ملکہ عالیہ کی آواز کے ساتھ ہی شہزادی ثنا شرما کر محل کے اندرونی حصے میں چلی گئی اور محل مبارک باد کی آواز سے گونج اٹھا۔ لوگ خوشی سے جھوم رہے تھے۔ وہ دل ہی دل میں اللّٰه کا شکر ادا کر رہا تھا ، جس نے اُسے یہ اعزاز بخشا تھا۔ بادشاہ نے اعظم سے پوچھا : " اے نوجوان ! ملکہ عالیہ کو تو تم نے مطمئن کر دیا ۔ اب یہ بتاؤ کہ تم سے کیا پوچھا گیا تھا اور تم نے کیا جواب دیا ؟اگر تم نے ایک بھی غلط جواب دیا تو تمھاری گردن ماردی جائے گی ۔ اعظم پُر اعتماد انداز میں کھڑا ہوا اور بولا : بادشاہ سلامت ! شہزادی نے ایک انگلی کھڑی کر کے پوچھا تھا کہ تم کیا اللّٰه کو ایک مانتے ہو! میں نے دو اُنگلیاں کھڑی کر کے جواب دیا کہ اللّٰه اور اُس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم پر میر ایمان اٹل ہے۔ بہت خوب ! ہم خوش ہوئے ۔ بادشاہ نے مسکرا کر کہا۔ اعظم بولا :اس کے بعد شہزادی نے تلوار چلا کر پوچھا تھا کہ اس سے بڑا کوئی ہتھیار ہے؟ میں نے جواب دیا ہاں ، قلم کا وار تلوار کے وار سے زیادہ کارگر ہوتا ہے۔ ماشاءاللّٰه ! نوجوان ! تم نے ہمارا دل جیت لیا ۔ تم نے ثابت کر دیا کہ جاہ و جلال ، دولت و حشمت کی علم کے سامنے کوئی حیثیت نہیں ، لیکن تیسرا جواب ؟ بادشاہ نے حوصلہ افزائی کرتے ہوئے پوچھا : اعظم نے آسمان کی طرف دیکھا اور کہنے لگا : بادشاہ ! شہزادی دربار کی سیڑھیاں اُتریں اور چڑھیں ، کرسی پر تھک کر بیٹھ گئیں۔ انھوں نے پوچھا تھا کہ میں تھک چکی ہوں ، لیکن میرے جسم کی ایک چیز نہیں تھکی۔ میں نے جواب دیا ۔ دل ، یہ پیدایش سے لے کر موت تک بغیر تھکے دھڑکتا رہتا ہے۔ بادشاہ نے اعظم کو کو پاس بلا کر گلے سے لگا لیا اور کہا اے لوگو ! گواہ رہنا ، میں نے حق دار کا حق ادا کر دیا ہے ۔ میری بیٹی ایسے شخص کی بیوی بن رہی ہے ، جس کے پاس علم کی دولت ہے ، جسے کوئی نہیں چرا سکتا ہے اور نہ کم کر سکتا ہے ۔ بادشاہ نے اسی وقت خوشی خوشی اعظم اور شہزادی ثنا کی شادی طے کر دی۔
Iran ka badshah bohat dinon se pareshan tha. yun to har taraf khush haali ka daur tha, magar badshah ki pareshani ki wajah is ki ekloti beti shehzadi Sana thi. har baap ki terhan badshah bhi apni beti ki shadi kar ke –apne farz se dosh hona chahta tha, lekin shehzadi Sana ny bhi ajeeb elaan kar rakha tha ke jo shakhs is salawon ke durust jawab day ga woh is se shadi kere gi .

aas paas ki reyaston ke kayi sahebzaade aeye magar na kaam lout gaye. is malik mein nojawan taalib ilm bhi rehta tha, is ka naam Azam tha. is ny –apne waalid se kaha ke woh bhi apni qismat aazma na chahta hai. Azam ke waalid ustad they aur kayi barson se logon mein ilm ki roshni baant rahay they. malik faris ka wazeer e azam, barray barray darbari aur shehar ka qaazi bhi un ka shagird tha. baap ny betay ki khwahish dekhi to bolay : beta! agar to na kaam lota to tera kuch nahi jaye ga, log kya kahin ge ke aik ustaad ka beta na kaam hogaya. Azam –apne baap se kehnay laga : baba! barray barray sahebzaade lout gaye. agar mein bhi na kaam ho gaya to kya sun-hwa, yeh to muqaabla hai jo bhi jeet le aur shayad woh khush naseeb mein hi hon. aakhir baap ko betay ki zid manni pari. Azam khushi khushi mehal ki taraf chal para. shehar bhar mein yeh khabar jungle ki aag ki terhan phail gayi ke aik aalam ka beta qismat azmaane mehal mein chala aaya hai. muqarara waqt par mehal logon se khicha khch bhara sun-hwa tha. badshah takhat par betha tha. malka Alia bhi mehal mein mojood theen. wazeer, Ameer , darbari, aur awam al naas sab darbaar mein mojood they. aakhir shehzadi ny apna pehla sawal kar dala. uss ny shahadat ki ungli fiza mein buland ki. Azam ny kuch der tawaquf kya aur phir shahadat wali ungli ke sath wali agli bhi fiza mein buland ki. yeh dekh kar shehzadi muskura uthi aur malka Alia boli : shabash, ae nojawan! tum pehla marhala kaam yabi se tey kar gaye ho .

dosray sawal ke liye shehzadi kursi se uthi aur haath mein talwar le kar sun-hwa mein chalanay lagi. kuch der baad woh dobarah apni nashist par aakar baith gayi. badshah sameit har darbari ki nazar Azam par thi. Azam khara sun-hwa aur apni jaib se qalam nikaal kar fiza mein buland kardiya. shabash ae nojawan! hum khush hue. yeh jawab bhi durust hai. malka Alia ki aawaz darbaar mein ubhri. isi ke sath darbaar, mubarak ho, mubarak ho, ki aawaz se goonj utha. 2 sawalat kya they? un ke jawabaat kya they, ab har shakhs is par ghhor kar raha tha ke shehzadi ny kya poocha aur Azam ny kya jawab diya? logon ke liye yeh aik raaz tha. aakhir shehzadi ny teesra sawal kar dala. woh taizi se seedhiyan utreen aur taizi se seedhiyan charh kar dobarah apni nashist par baith gayi. yeh bara ajeeb o ghareeb sawal tha. har taraf khamoshi thi. logon ki sansen ruki hui theen. ab to Azam ke haath paon thanday hue ja rahay they. aakhir Azam khara sun-hwa aur –apne dil par haath rakh kar shehzadi ki taraf dekhnay laga. marhaba, marhaba ae nojawan! mubarak ho! shehzadi ny tumhen pasand kar liya hai. malka Alia ki aawaz ke sath hi shehzadi Sana sharmaa kar mehal ke androoni hissay mein chali gayi aur mehal mubarak bad ki aawaz se goonj utha. log khushi se jhoom rahay they. woh dil hi dil mein ALLAH ka shukar ada kar raha tha, jis ny ussay yeh aizaz bakhsha tha. badshah ny Azam se poocha : ” ae nojawan! malka Alia ko to tum ny mutmaen kar diya. ab yeh batao ke tum se kya poocha gaya tha aur tum ny kya jawab diya ?

agar tum ny aik bhi ghalat jawab diya to tumhari gardan mardi jaye gi. Azam pur aetmaad andaaz mein khara sun-hwa aur bola : badshah salamat! shehzadi ny aik ungli khari kar ke poocha tha ke tum kya ALLAH ko aik mantay ho! mein ny do ungliyan khari kar ke jawab diya ke ALLAH aur uss ke rasool sale Allah aleh wasallam par Meer imaan atal hai. bohat khoob! hum khush hue. badshah ny muskura kar kaha. Azam bola : is ke baad shehzadi ny talwar chala kar poocha tha ke is se bara koi hathyaar hai? mein ny jawab diya haan, qalam ka waar talwar ke waar se ziyada kargar hota hai. masha ALLAH! nojawan! tum ny hamara dil jeet liya. tum ny saabit kar diya ke Jah o jalal, doulat o Hashmat ki ilm ke samnay koi hesiyat nahi, lekin teesra jawab? badshah ny hosla afzai karte hue poocha : Azam ny aasman ki taraf dekha aur kehnay laga : badshah! shehzadi darbaar ki seedhiyan Utrain aur chrhhin, kursi par thak kar baith gayeen. unhon ny poocha tha ke mein thak chuki hon, lekin mere jism ki aik cheez nahi thaki. mein ny jawab diya. dil, yeh pidaaish se le kar mout taq baghair thakey dhadakataa rehta hai. badshah ny Azam ko ko paas bulaa kar gilaay se laga liya aur kaha ae logo! gawah rehna, mein ny haq daar ka haq ada kar diya hai. meri beti aisay shakhs ki biwi ban rahi hai jis ke pas ilm ki dolat hai , jisy na koi chura skta hai aur na kam kr skta haib,
badshah ne dono ki shadi khushi se tay kr di

mazeed kahaniyan parhney ke liya yahan click karein