Qazi Aur Shagird - Naseehat Amoz Kahani - Qazi Ka Sawal


Qazi Aur Shagird - Naseehat Amoz Kahani - Qazi Ka Sawal

ایک قاضی نے اپنے شاگردوں کا امتحان لینے کے لئے ان کے سامنے ایک مقدمہ رکھا اور ان کو اپنی رائے لکھنے کو کہا.
ایک شخص کے گھر مہمان آئے. اس نے ان کی خاطر مدارات کی. اپنے ملازم کو دودھ لینے بھیجا تاکہ مہمانوں کے لیے کھیر بنائی جائے. ملازم دودھ کا برتن سر پر رکھے آرہا تھا کہ اوپر سے ایک چیل گذری جس کے پنجوں میں سانپ تھا. سانپ کے منہ سے زہر کے قطرے نکلےجو دودھ میں جاگرے. مہمانوں نے کھیر کھائی تو سب ہلاک ہوگئے. اب اس کا قصوروار کون ہے.
پہلے شاگرد نے لکھا کہ یہ غلطی ملازم کی ہے اسے برتن ڈھانپنا چاہیے تھا. لہذا مہمانوں کا قتل اس کے ذمہ ہے اسے سزا دی جائے گی... قاضی نے کہا کہ یہ بات درست ہے کہ ملازم کو برتن ڈھانپنا چاہیے تھا. لیکن یہ اتنا بڑا قصور نہیں کہ اسے موت کی سزا دی جائے.
دوسرے شاگرد نے لکھا اصل جرم گھر کے مالک کا ہے اسے پہلے خود کھیر چکھنی چاہیے تھی. پھر مہمانوں کو پیش کرنی چاہیے تھی. قاضی نے یہ جواز بھی مسترد کر دیا. تیسرے نے لکھا یہ ایک اتفاقی واقعہ ہے. مہمانوں کی تقدیر میں مرنا لکھا تھا. اس میں کسی کو سزا وار قرار نہیں دیا جا سکتا ہے. قاضی نے کہا کہ یہ کسی جج کی اپروچ نہیں ہونی چاہیے. جج اگر مقدمات تقدیر پر ڈال دے گا تو انصاف کون کرے گا.
چوتھے نے کہا کہ سب سے پہلا سوال یہ ہے کہ یہ سارا منظر دیکھا کس نے.کس نے چیل کے پنجوں میں سانپ دیکھا. کس نے سانپ کے منہ سے زہر نکلتا دیکھا. اگر اس منظر کا گواہ ملازم ہے تو وہ مجرم ہے. اگر گواہ مالک ہے تو وہ مجرم ہے. اور اگر کوئی گواہ نہیں تو جس نے یہ کہانی گھڑی ہے وہ قاتل ہے. قاضی نے اپنے چوتھے شاگرد کو شاباش دی اور صرف اسے منصب قضا کا اہل قرار دیا
Aik qaazi ne apne shagrdon ka imthehaan lainay ke liye un ke samnay aik muqadma rakha aur un ko apni raye likhnay ko kaha.
1 shakhs ke ghar maheman aeye. is ne un ki khatir madaraat ki. apne mulazim ko doodh lainay bheja taakay mehmanon ke liye kheer banai jaye. mulazim doodh ka bartan sir par rakhay araha tha ke oopar se aik cheel guzri jis ke panjoo mein saanp tha. saanp ke mun se zeher ke qatray niklay jo doodh mein jagre. mehmanon ne kheer khayi to sab halaak hogaye. ab is ka qasoorwar kon hai .

pehlay shagird ne likha ke yeh ghalti mulazim ki hai usay bartan dhanpna chahiye tha. lehaza mehmanon ka qatal is ke zimma hai usay saza di jaye gi. .. qaazi ne kaha ke yeh baat durust hai ke mulazim ko bartan dhanpna chahiye tha. lekin yeh itna bara qasoor nahi ke usay mout ki saza di jaye .

dosray shagird ne likha asal jurm ghar ke maalik ka hai usay pehlay khud kheer chakhni chahiye thi. phir mehmanon ko paish karni chahiye thi. qaazi ne yeh juwaz bhi mustard kar diya. . .
teesray ne likha yeh aik ittifaqi waqea hai. mehmanon ki taqdeer mein marna likha tha. is mein kisi ko saza waar qarar nahi diya ja sakta hai. qaazi ne kaha ke yeh kisi judge ki approach nahi honi chahiye. judge agar muqadmaat taqdeer par daal day ga to insaaf kon kere ga .

chouthay ne kaha ke sab se pehla sawal yeh hai ke yeh sara manzar dekha kis ne, kis ne cheel ke panjoo mein saanp dekha. ..? kis ne saanp ke mun se zeher nikalta dekha. ..? agar is manzar ka gawah mulazim hai to woh mujrim hai. agar gawah maalik hai to woh mujrim hai .
aur agar koi gawah nahi to jis ne yeh kahani gharri hai. ..? woh qaatil hai. qaazi ne apne chouthay shagird ko shabash di aur sirf usay mansab qaza ka ahal qarar diya. . .

مزید کہانیاں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں