46 Saal Tak Pregnant Rehny Wali Aurat - Herat Angez Sacha Waqia - Ajeeb O Ghareeb Sacha Waqia
 عورت خدا کی وہ تخلیق ہے جو نظامِ دنیا اور زندگی کو آگے بڑھانے میں ایک اہم کردار رکھتی ہے۔ دنیا میں انسانوں کی پیدائش کا سلسلہ عورت کے ذریعہ عمل میں آتا ہے۔ 9 مہینے کی تکلیف اور محنت کے بعد،جس میں گہرے جذبات شامل ہوتے ہیں، عورت ایک دوسرے انسان کو جنم دیتی ہے۔ لیکن کبھی کبھی قدرت اور سائنس کے ایسے کرشمے بھی سامنے آجاتے ہیں جن کے سامنے انسانی عقل دنگ رہ جاتی ہے
 یہ کہانی ہے مراکش میں رہنے والی ایک خاتون زہرہ ابوطالب کی۔ جنہوں نے اولاد کو جنم دینے کے لئے 9 مہینے نہیں بلکہ 46 سال حمل برقرار رکھا۔ حیرت کن بات یہ ہے کہ کیا دنیا میں ایسا اتفاق ممکن بھی ہے؟ لیکن میڈیکل سائنس کی تاریخ میں ایسے کُل 300 واقعات پیش آچکے ہیں جن کا ریکارڈ موجود ہے۔ سن 1955 میں زہرہ کی عمر 26 برس تھی جب ان کا حمل وجود میں آیا۔ اس دوران انہوں نے کوئی میڈیکل امداد حاصل نہیں کی اور اپنی اولاد کی پیدائش کسی ہسپتال کے بجائے گاؤں کی دائیوں کے ذریعہ کروانے کا فیصلہ کیا۔ نو مہینے بعد جب پیدائش کا وقت قریب آیا تو چیزیں توقع کے بر خلاف ہونے لگیں۔ دو دن تک درد میں مبتلا رہنے کے بعد بھی زہرہ کے یہاں  پیدائش عمل میں نہ آسکی، جس کے بعد ان کو ہسپتال منتقل کردیا گیا۔ ڈاکٹرز نے انکی حالت دیکھ کر سی سیکشن یعنی آپریشن کے زریعہ پیدائش عمل میں لانے کی تجویز دی۔ لیکن اسی دوران زہرہ نے ایک عورت کو پیدائش کے وقت موت کے منہ میں جاتے دیکھا، جسکی وجہ سے انہوں نے آپریٹ کروانے سے انکار کردیا۔ ڈاکٹرز کی اجازت لئے بغیر وہ اسی تکلیف کے ساتھ اپنے گاؤں واپس آگئیں۔ مزید دو دن گزرے اور تکلیف کے ساتھ ساتھ جسم کے اندر موجود متحرک وجود بھی تھم گیا۔ زہرہ کو نہیں پتہ تھا کہ انکے اور انکے بچے کے ساتھ کیا ہوا۔ وہ بھی اس واقعہ کو اس زمانے میں مانے جانے والی کہانی سمجھ بیٹھیں جس کا نام ‘سلیپِنگ چائلڈ مِتھ’ ہے۔
 زہرہ کا ماننا تھا کہ کبھی نا کبھی وہ اپنی اولاد کو جنم ضرور دینگی۔ انہوں نے یہ سب بھلا کر معمول کی زندگی گزاری اور کچھ بچے گود لے کر انہیں پالا۔ لیکن 46 سال بعد وہ ہوا جو انہوں نے کبھی سوچا نہیں تھا۔ اس وقت انکی عمر 75 برس تھی جب انہیں دوبارہ اسی تکلیف سے دوچار ہونا پڑا جو حمل کے وقت انہیں پیش آئی تھی۔ ڈاکٹرز نے اس تکلیف کی وجہ ‘اووریز’ میں پیدا ہونے والے ٹیومر یا کینسر بتائی۔ ایم آر آئی کے زریعہ انکے اندر موجود چیز کی شناخت کرنے کی کوشش کی گئی تو پتہ چلا کہ وہ مادہ انکا بچہ ہے جومردہ ہوکر ‘کیلسیفائی’ ہوچکا ہے۔ یعنی پتھر بن چکا ہے۔ بچے کا جسم کے اندر پتھر بن جانا ‘لیتھیوپیڈیا’ کہلاتا ہے۔ 
ایسا واقعہ بہت شازونادر ہی ہوتا ہے۔ عمومی طور پر بچے کے مردہ ہونے کی صورت میں اگر طبی امداد نہ لی جائے توعورت کی موت واقعہ ہوسکتی ہے۔ مگر زہرہ کے ساتھ ایسا نا ہونا ایک معجزہ تھا۔ لیکن اب بھی بات خطرے سے خالی نہیں تھی۔ 46 سال پرانا مسئلہ اور زہرہ کی عمر آپریشن کرنے کے لئے پریشان کن تھی۔ بہرحال ڈاکٹرز کی مہارت نے زہرہ کا آپریشن کامیاب بنایا۔ آخرکار زہرہ کو پتہ چل گیا کہ انکے ساتھ کیا ہوا تھا اور اب وہ اس بچے کو درحقیقت جنم دینے میں کامیاب ہوئیں۔    
46 Saal Tak Pregnant Rehny Wali Aurat - Herat Angez Sacha Waqia - Ajeeb O Ghareeb Sacha Waqia 

Aurat khuda ki woh takhleeq hai jo nizam duniya aur zindagi ko agay badhaane mein aik ahem kirdaar rakhti hai. duniya mein insanon ki paidaiesh ka silsila aurat ke zareya amal mein aata hai. 9 mahinay ki takleef aur mehnat ke baad, jis mein gehray jazbaat shaamil hotay hain, aurat aik dosray ensaan ko janam deti hai. lekin kabhi kabhi qudrat aur science ke aisay krshme bhi samnay aajate hain jin ke samnay insani aqal dang reh jati hai .
yeh kahani hai marakish mein rehne wali aik khatoon Zohrah Abu Talib ki. jinhon ne aulaad ko janam dainay ke liye 9 mahinay nahi balkay 46 saal hamal barqarar rakha. herankun baat yeh hai ke kya duniya mein aisa ittafaq mumkin bhi hai? lekin medical science ki tareekh mein aisay kul 300 waqeat paish aachukay hain jin ka record mojood hai .

1955 mein Zohrah ki Umar 26 baras thi jab un ka hamal wujood mein aaya. is douran unhon ne koi medical imdaad haasil nahi ki aur apni aulaad ki paidaiesh kisi hospital ke bajaye gaon ki daiyo ke zareya krwane ka faisla kya. no mahinay baad jab paidaiesh ka waqt qareeb aaya to cheeze tawaqqa ke Bar khilaaf honay lagen. do din taq dard mein mubtala rehne ke baad bhi Zohrah ke yahan paidaiesh amal mein nah aaski, jis ke baad un ko hospital muntaqil kardiya gaya .

doctors ne unki haalat dekh kar C section yani operation ke zarea paidaiesh amal mein laane ki tajweez di. lekin isi douran Zohrah ne aik aurat ko paidaiesh ke waqt mout ke mun mein jatay dekha, jiski wajah se unhon ne opration krwane se inkaar kardiya. doctors ki ijazat liye baghair woh isi takleef ke sath apne gaon wapas agaien. mazeed do din guzray aur takleef ke sath sath jism ke andar mojood mutharrak wujood bhi tham gaya. Zohrah ko nahi pata tha ke unkay aur unkay bachay ke sath kya sun-hwa. woh bhi is waqea ko is zamane mein manay jany wali kahani samajh bathain jis ka naam' sleeping child myth' hai .
Zohrah ka maanna tha ke kabhi na kabhi woh apni aulaad ko janam zaroor dengy. unhon ne yeh sab bhala kar mamool ki zindagi guzari aur kuch bachay goad le kar inhen paala. lekin 46 saal baad woh howa jo unhon ne kabhi socha nahi tha. is waqt unki Umar 75 baras thi jab inhen dobarah isi takleef se dochar hona para jo hamal ke waqt inhen paish aayi thi. doctors ne is takleef ki wajah' ovaries' mein peda honay walay tumor ya cancer bataaye .

am are aayi ke zarea unkay andar mojood cheez ki shanakht karne ki koshish ki gayi to pata chala ke woh madah inka bacha hai jo murda ho kar calsefied ho chuka hai. yani pathar ban chuka hai. bachay ka jism ke andar pathar ban jana lethopedia kehlata hai. aisa waqia bohat shazonader hi hota hai .
umomi tor par bachay ke murda honay ki soorat mein agar tibbi imdaad nah li jaye to aurat ki mout waqea hosakti hai. magar Zohrah ke sath aisa na hona aik moujza tha .

lekin ab bhi baat khatray se khaali nahi thi. 46 saal purana masla aur Zohrah ki Umar operation karne ke liye pareshan kin thi. behar haal doctors ki mahaarat ne Zohrah ka operation kamyaab banaya. aakhir kaar Zohrah ko pata chal gaya ke unkay sath kya sun-hwa tha aur ab woh is bachay ko dar haqeeqat janam dainay mein kamyaab huien .

Zohrah shukar guzar hain ke unki zindagi bach gayi aur woh aik normal zindagi guzaar rahi hain

mazeed aisy waqiat parhne ke liye yahan click karein