Budhiya Aur Pani Ka Matka - Sabaq Amoz Kahani - Urdu Hindi Moral Story

Budhiya Aur Pani Ka Matka - Sabaq Amoz Kahani - Urdu Hindi Moral Story
budhiya-aur-pani-ka-matka-sabaq-amoz-kahani-budiya-ki-kahani
کہتے ہیں ایک چینی بڑھیا کے گھر میں پانی کیلئے دو مٹکے تھے، جنہیں وہ روزانہ ایک لکڑی پر باندھ کر اپنے کندھے پر رکھتی اور نہر سے پانی بھر کر گھر لاتی۔ ان دو مٹکوں میں سے ایک تو ٹھیک تھا مگر دوسرا کچھ ٹوٹا ہوا۔ ہر بار ایسا ہوتا کہ جب یہ بڑھیا نہر سے پانی لے کر گھر پہنچتی تو ٹوٹے ہوئے مٹکی کا آدھا پانی راستے میں ہی بہہ چکا ہوتا۔ جبکہ دوسرا مٹکا پورا بھرا ہوا گھر پہنچتا۔

ثابت مٹکا اپنی کارکردگی سے بالکل مطمئن تھا تو ٹوٹا ہوا بالکل ہی مایوس۔ حتیٰ کہ وہ تو اپنی ذات سے بھی نفرت کرنے لگا تھا کہ آخر کیونکر وہ اپنے فرائض کو اس انداز میں پورا نہیں کر پاتا جس کی اس سے توقع کی جاتی ہے۔اور پھر مسلسل دو سالوں تک ناکامی کی تلخی اور کڑواہٹ لئے ٹوٹے ہوئے گھڑے نے ایک دن اس عورت سے کہا: میں اپنی اس معذوری کی وجہ سے شرمندہ ہوں کہ جو پانی تم اتنی مشقت سے بھر کر اتنی دور سے لاتی ہو اس میں سے کافی سارا صرف میرے ٹوٹا ہوا ہونے کی وجہ سے گھر پہنچتے پہنچتے راستے میں ہی گر جاتا ہے۔

گھڑے کی یہ بات سن کر بڑھیا ہنس دی اور کہا: کیا تم نے ان سالوں میں یہ نہیں دیکھا کہ میں جسطرف سے تم کو اٹھا کر لاتی ہوں ادھر تو پھولوں کے پودے ہی پودے لگے ہوئے ہیں جبکہ دوسری طرف کچھ بھی نہیں اگا ہوا۔
مجھے اس پانی کا پورا پتہ ہے جو تمہارے ٹوٹا ہوا ہونے کی وجہ سے گرتا ہے، اور اسی لئے تو میں نے نہر سے لیکر اپنے گھر تک کے راستے میں پھولوں کے بیج بو دیئے تھے تاکہ میرے گھر آنے تک وہ روزانہ اس پانی سے سیراب ہوتے رہا کریں۔ ان دو سالوں میں ، میں نے کئی بار ان پھولوں سے خوبصورت گلدستے بنا کر اپنے گھر کو سجایا اور مہکایا۔ اگر تم میرے پاس نا ہوتے تو میں اس بہار کو دیکھ ہی نا پاتی جو تمہارے دم سے مجھے نظر آتی ہے۔

یاد رکھئے کہ ہم سے ہر شخص میں کوئی نا کوئی خامی ہے۔ لیکن ہماری یہی خامیاں، معذوریاں اور ایسا ٹوٹا ہوا ہونا ایک دوسرے کیلئے عجیب اور پر تاثیر قسم کے تعلقات بناتا ہے۔ ہم پر واجب ہے کہ ہم ایک دوسرے کو ان کی خامیوں کے ساتھ ہی قبول کریں۔ ہمیں ایک دوسرے کی ان خوبیوں کو اجاگر کرنا ہے جو اپنی خامیوں اور معذوریوں کی خجالت کے بوجھ میں دب کر نہیں دکھا پاتے۔ معذور بھی معاشرے کا حصہ ہوتے ہیں اور اپنی معذوری کے ساتھ ہی اس معاشرے کیلئے مفید کردار ادا کر سکتے ہیں۔

جی ہاں، ہم سب میں کوئی نا کوئی عیب ہے، پھر کیوں نا ہم اپنے ان عیبوں کے ساتھ، ایک دوسرے کی خامیوں اور خوبیوں کو ملا کر اپنی اپنی زندگیوں سے بھر پور لطف اٹھائیں۔ ہمیں ایک دوسرے کو اس طرح قبول کرنا ہے کہ ہماری خوبیاں ہماری خامیوں پر پردہ ڈال رہی ہوں

Kehte hain aik cheeni budhiya ke ghar mein pani ke liye do matkay they, jinhein woh rozana aik lakri par bandh kar apne kandhay par rakhti aur neher se pani bhar kar ghar latayen. un do matkon mein se aik to theek tha magar dosra kuch toota huwa. har baar aisa hota ke jab yeh budiya neher se pani le kar ghar pahunchti to tootay hue matki ka aadha pani rastay mein hi beh chuka hota. jabkay dosra matka poora bhara huwa ghar pohanch ata .

saabit matka apni karkardagi se bilkul mutmaen tha to toota huwa bilkul hi mayoos. hatta ke woh to apni zaat se bhi nafrat karne laga tha ke aakhir kyonkr woh apne faraiz ko is andaaz mein poora nahi kar paata jis ki is se tawaqqa ki jati hai. aur phir musalsal do saloon taq nakami ki talkhi aur karhwahat liye tootay hue gharrey ny aik din is aurat se kaha : mein apni is mazoori ki wajah se sharminda hon ke jo pani tum itni mushaqqat se bhar kar itni door se lati ho is mein se kaafi sara sirf mere toota huwa honay ki wajah se ghar pahunchte pahunchte rastay mein hi gir jata hai .

gharrey ki yeh baat sun kar budiya hans di aur kaha : kya tum ny un saloon mein yeh nahi dekha ke mein jis traf se tum ko utha kar latayen hon idhar to phoolon ke pouday hi pouday lagey hue hain jabkay doosri taraf kuch bhi nahi uga huwa .

mujhe is pani ka poora pata hai jo tumahray toota huwa honay ki wajah se girta hai, aur isi liye to mein ny neher se leker apne ghar taq ke rastay mein phoolon ke beej bo diye they taakay mere ghar anay taq woh rozana is pani se sairaab hotay raha karen. un do saloon mein, mein ny kayi baar un phoolon se khobsorat guldastay bana kar apne ghar ko sajaya aur mahekaya. agar tum mere paas na hotay to mein is bahhaar ko dekh hi na paati jo tumahray dam se mujhe nazar aati hai .


yaad rkhye ke hum se har shakhs mein koi na koi khaami hai. lekin hamari yahi khamiyan, mazoryan aur aisa toota huwa hona aik dosray ke liye ajeeb aur par taseer qisam ke taluqaat banata hai. hum par wajib hai ke hum aik dosray ko un ki khamion ke sath hi qubool karen. hamein aik dosray ki un khoobiyon ko ujagar karna hai jo apni khamion aur mazoryon ki khajalat ke boojh mein dab kar nahi dikha paate. maazoor bhi muashray ka hissa hotay hain aur apni mazoori ke sath hi is muashray ke liye mufeed kirdaar ada kar satke hain .

jee haan, hum sab mein koi na koi aib hai, phir kyun na hum apne un aibon ke sath, aik dosray ki khamion aur khoobiyon ko mila kar apni apni zindagion se bhar poor lutaf uthayen. hamein aik dosray ko is tarhan qabool karna hai ke hamari khoobiyan hamari khamion par parda daal rahi hon


Mazeed Kahaniyan Parhne Ke Liye Yahan Click Karein