Dewar e Cheen History - Urdu - Hindi - Deewar e Cheen Ki Haqeeqat - Dewar e Cheen - Deware Cheen - Kitni Purani Hai - Deewar E Cheen Ki Tareekh دیوار چین - دیوار چین کی تاریخ - حقیقت - دیوار چین اردو - دیوار چین کی لمبائی 

دیوار چین

چینی قوم کی روشن دلیل

حضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش سے تقریباّ
 دو سو سال پہلے چین کے بادشاہ چن شی ہوانگ نے اپنے ملک کو دشمنوں کے حملوں سے محفوظ کرنے کے لیے شمالی سرحد پر ایک دیوار بنانے کی خواہش کی۔ اس دیوار کی ابتدا چین اور منچوکو کی سرحد کے پاس سے کی گئی۔ چین کے دشمن اس زمانے میں ہن اور تاتار تھے جو وسط ایشیا میں کافی طاقتور سمجھے جاتے تھے۔ یہ دیوار خلیج لیاؤتنگ سے منگولیا اور تبت کے سرحدی علاقے تک پھیلی ہوئی ہے۔ اس کی لمبائی تقریبا پندرہ سو میل ہے۔ اور یہ بیس سے لے کر تیس فٹ تک اونچی ہے ۔ چوڑائی نیچے سے پچیس فٹ اور اوپر سے بارہ فٹ کے قریب ہے ۔ ہر دو سو گز کے فاصلے پر پہریداروں کے لیے مضبوط پناہ گاہیں بنی ہوئی ہیں۔
 دیوار کے اوپر 25 ہزار چوکیاں قائم کی گئی ہیں۔ ان چوکیوں کی مدد سے حملہ آوروں کی نقل وحرکت دیکھا جا سکتا
 دیوار چین کو تعمیر کرنے میں 17 سو سال کا طویل عرصہ لگا ہے؟ بعض کتابوں میں یہ 2 ہزار سال بھی بتایا گیا ہے۔دراصل اس دیوار کی تعمیر منگول حملہ آوروں سے بچنے کے لیے کی گئی جس کا آغاز 206 قبل مسیح میں کیا گیا۔ اس کے بعد بے شمار بادشاہوں نے حکومت کی اور چلے گئے لیکن اس دیوار کی تعمیر کا کام جاری رہا۔اس دوران دنیا وقت کو ایک نئے پیمانے (حضرت عیسیٰ کی آمد کا بعد کا وقت۔ بعد از مسیح) سے ناپنے لگی،سنہ 1368 شروع ہوا اور چین میں منگ خانوادے کی حکومت کا آغاز ہوا۔لیکن دیوار چین کی تعمیر ابھی بھی جاری تھی۔آخر اس کے لگ بھگ ڈھائی سو سال بعد اسی خانوادے کے ایک بادشاہ کے دور میں دیوار کی تعمیر مکمل ہوئی۔ یہ 1644 کا سال تھا۔موجودہ دیوار کا 90 فیصد حصہ اسی خاندان کے دور میں تعمیر ہوا۔دیوار چین کی تعمیر کے دوران اینٹوں کو جوڑنے کے لیے چاول کا آٹا استعمال کیا گیا تھا۔اس عظیم دیوار کی تعمیر کے دوران 10 لاکھ مزدور اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے، لیکن اس دیوار نے چینیوں کو بیرونی حملہ آوروں سے محفوظ کردیا
آرکیالوجیکل سروے کے حالیہ سروے کے مطابق مجموعی طور پر عظیم دیوار، اپنی تمام شاخوں سمیت 8،851.8 کلومیٹر (5،500.3 میل) تک پھیلی ہے.
منگول خاندان کی حفاظت کے لئے دس لاکھ سے زیادہ لوگ اس دیوار پر مقرر تھے.
یہ متوقع ہے، کہ عظیم دیوار کے منصوبے میں تقریبا 20 سے 30 لاکھ لوگوں نے اپنی زندگی اسے تعمیر کرنے میں لگا دی تھی.
 میں ہونے والے بین الاقوامی سروے میں اسے دنیا کے 2007نئے سات عجائبات میں منتخب کیا گیا ہے۔ چین جانے والے سیاحوں کے لیے دیوار چین کو دیکھنا ناگزیر ہوتا ہے جہاں ہر سال دنیا بھر سے بڑی تعداد میں لوگ آتے ہیں۔
 اس عظیم دیوار کا 30 فیصد حصہ وقت کیساتھ ساتھ غائب ہوچکا ہے ۔ مقامی انتظامیہ کے مطابق اس دیوار کی تباہی میں سب سے بڑا ہاتھ ان دیہاتیوں کا ہے جو اس دیوار کے دامن میں آباد ہیں۔یہ مقامی لوگ دیوار میں لگی مضبوط اور موٹی اینٹیں نکال کر اپنے گھر تعمیر کرتے ہیں۔ دیوار کی چوری شدہ اینٹیں فروخت بھی کی جاتی ہیں۔ اینٹوں کی مسلسل چوری کے باعث دیوار کو نقصان پہنچ رہا ہے اور وہ کئی جگہ سے خستہ حال ہوتی جارہی ہے۔

Deewar e Cheen

Cheeni qoum ki roshan Daleel
Hazrat Eesa Ali Salam ki paidaiesh se tqribaan 200 saal pehlay cheen ke badshah chinn she hwang ne apne mulk ko dushmanon ke hamlon se mehfooz karne ke liye shumali sarhad par aik deewar bananay ki khwahish ki. is deewar ki ibtida cheen aur manchuko ki sarhad ke paas se ki gayi. cheen ke dushman os zamane mein hun aur tataar they jo west Asia mein kaafi taaqatwar samjhay jatay they. yeh deewar khaleej liotung se mongolia aur tibbet ke sarhadi ilaqay taq phaily hui hai. is ki lambai taqreeban 1500 mile hai. aur yeh 20 se le kar 30 foot taq onche hai. choraai neechay se 25 foot aur oopar se 12 foot ke qareeb hai. har 200 gaz ke faaslay par pehridaron ke liye mazboot panah gahin bani hui hain .
deewar ke oopar 25 hazaar chokyan qaim ki gayi hain. un chokion ki madad se hamla awaron ki naqal harkat dekha ja sakta
deewar cheen ko taameer karne mein 1700 saal ka taweel arsa laga hai? baaz kitabon mein yeh 2 hazaar saal bhi bataya gaya hai. darasal is deewar ki taamer mongol hamla awaron se bachney ke liye ki gayi jis ka aaghaz 206 qabal maseeh mein kya gaya. is ke baad be shumaar badshahon ne hukoomat ki aur chalay gaye lekin is deewar ki taamer ka kaam jari raha. is douran duniya waqt ko aik naye pemanay ( Hazrat Eesa ki aamad ka baad ka waqt. baad az maseeh ) se napnay lagi, sunah 1368 shuru hwa aur cheen mein mng khanwade ki hukoomat ka aaghaz sun-hwa. lekin deewar cheen ki taamer abhi bhi jari thi. aakhir is ke lag bhag dhai so saal baad isi khanwade ke aik badshah ke daur mein deewar ki taamer mukammal hui. yeh 1644 ka saal tha. mojooda deewar ka 90 feesad hissa isi khandan ke daur mein taamer huwa. deewar cheen ki taameer ke douran eento ko jornay ke liye chawal ka aatta istemaal kya gaya tha. is azeem deewar ki taamer ke douran 10 laakh mazdoor apni jaanun se haath dho baithy, lekin is deewar ne chinyon ko bairooni hamla awaron se mehfooz kar dia
haliya surway ke mutabiq majmoi tor par azeem deewar, apni tamam shaakhon sameit 8, 851. 8 kilometer ( 5?, 500. 3 mil ) taq phaily hai .
mongol khandan ki hifazat ke liye 10 laakh se ziyada log is deewar par muqarrar they .
yeh mutawaqqa hai, ke azeem deewar ke mansoobay mein taqreeban 20 se 30 laakh logon ne apni zindagi usay taamer karne mein laga di thi .
2007 mein honay walay bain al aqwami surway mein usay duniya ke naye saat ajaebaat mein muntakhib kya gaya hai. cheen jany walay sayaho ke liye deewar cheen ko daykhna na guzeer hota hai jahan har saal duniya bhar se barri tadaad mein log atay hain .
is azeem deewar ka 30 feesad hissa waqt kay sath sath gayab ho chuka hai. muqami intizamia ke mutabiq is deewar ki tabahi mein sab se bara haath un dehation ka hai jo is deewar ke daman mein abad hain. yeh muqami log deewar mein lagi mazboot aur mouti eenten nikaal kar apne ghar taamer karte hain. deewar ki chori shuda eenten farokht bhi ki jati hain. eenton ki musalsal chori ke baais deewar ko nuqsaan poanch raha hai aur woh kayi jagah se khasta haal hoti ja rahi hai