Poor Barber - Ghareeb Naai - Motivational Story In Urdu - Urdu Hindi
poor-barber-sabaq-amoz-kahani-sabaq-amoz-waqia
ایک گاؤں میں غریب نائی رہا کرتا تھا جو ایک درخت کے نیچے کرسی لگا کے لوگوں کی حجامت کرتا ۔

مشکل سے گزر بسر ہورہی تھی۔ اس کے پاس رہنے کو نہ گھر تھا۔ نہ بیوی تھی نہ بچے تھے۔ صرف ایک چادر اور ایک تکیہ اس کی ملکیت تھی ۔ جب رات ہوتی تو وہ ایک بند سکول کے باہر چادر بچھاتا، تکیہ رکھتا اور سو جاتا.

ایک دن صبح کے وقت گاوں میں سیلاب آ گیا۔

اس کی آنکھ کھلی تو ہر طرف شور و غل تھا۔
وہ اٹھا اور سکول کے ساتھ بنی ٹینکی پر چڑھ گیا. چادر بچھائی، دیوار کے ساتھ تکیہ لگایا اور لیٹ کر لوگوں کو دیکھنے لگا ۔

لوگ اپنا سامان، گھر کی قیمتی اشیا لے کر بھاگ رہے تھے. کوئی نقدی لے کر بھاگ رہا ہے، کوئی زیور کوئی بکریاں تو کوئی کچھ قیمتی اشیا لے کر بھاگ رہا ہے۔

اسی دوران ایک شخص بھاگتا آ رہا تھا اس نے سونے کے زیور پیسے اور کپڑے اٹھا رکھے تھے۔ جب وہ شخص اس نائی کے پاس سے گزرا اوراسے سکون سے لیٹے ہوئے دیکھا توغصے سے بولا !

" اوئے ساڈی ہر چیز اجڑ گئی اے۔
ساڈی جان تے بنی اے، تے تو ایتھے سکون نال لما پیا ہویا ایں"۔۔(ہماری ہر چیز اجڑ گئی ہے اور تم یہاں سکوں سے سو رہے ھو ؟)

یہ سن کرنائی بولا ! 
لالے اج ای تے غربت دی چس آئی اے"(آج تو غربت کا اصل مزہ آیا ہے )

جب میں نے یہ کہانی سنی تو ہنس پڑا مگر پھر ایک خیال آیا  کہ شاید روز محشر کا منظر بھی کچھ ایسا ہی ہوگا۔

جب تمام انسانوں سے حساب لیا جائے گا۔
ایک طرف غریبوں کا حساب ہو رہا ہو گا ۔
دو وقت کی روٹی، کپڑا ۔حقوق اللہ اور حقوق العباد ۔

ایک طرف امیروں کا حساب ہو رہا ہو گا ۔
پلازے، دکانیں، فیکٹریاں،  گاڑیاں،  بنگلے،  سونا اور زیوارات
ملازم ۔ پیسہ ۔ حلال حرام ۔ عیش و آرام ۔ زکوۃ  ۔ حقوق اللہ۔ حقوق العباد۔۔۔۔
اتنی چیزوں کا حساب کتاب دیتے ہوئے پسینے سے شرابور اور خوف سے تھر تھر کانپ رہے ہوں گے۔

تب شاید اسی نائی کی طرح غریب ان امیروں کو دیکھ رہے ہو گے۔
چہرے پر ایک عجیب سا سکون اور شاید دل ہی دل میں کہہ رہے ہوں گے۔۔۔۔!

"اج ای تے غربت دی چس آئی اے ۔۔۔۔

"اللہ تعالی سے دعا ہے کہ ہمیں ہر ہر نعمت کا شکر ادا کرنے کی اور اللہ کی رضا کے مطابق استعمال اور تقسیم  کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

آمین

Motivational Story In Urdu

Aik gaon mein ghareeb naai ( barber ) raha karta tha jo aik darakht ke neechay kursi laga ke logon ki hajamat karta.
mushkil se guzar busr horahee thi. is ke paas rehne ko nah ghar tha. nah biwi thi nah bachay they. serf aik chadar aur aik takiya is ki malkiat thi. jab raat hoti to woh aik band shool ke bahar chadar bichata, takiya rakhta aur so jata .
  aik din subah ke waqt gaon mein selaab aa gaya .
es ki aankh khuli to har taraf shore o ghul tha.
woh utha aur shool ke sath bani tanki par charh gaya. chadar bichai, deewar ke sath takiya lagaya aur late kar logon ko dekhnay laga.
log apna samaan, ghar ki qeemti ashya le kar bhaag rahay they. koi naqdi le kar bhaag raha hai, koi zewar koi bakriyan to koi kuch qeemti ashya le kar bhaag raha hai .
esi douran 1 shakhs bhagta aa raha tha is nay sonay ke zewar pesey aur kapray utha rakhay they. jab woh shakhs is naai ke paas se guzra aur se sukoon se letey hue dekha to ghussy se bola !
" oye saaddi har cheez ujar gayi ae .
saaddi jaan te bani ae, te to aythe sukoon naal lma piya hoya ein ". .
ye sun kar naai bola !
lale aj hee te gurbat di chas aayi ae "

jub mein nay yeh kahani suni to hans para magar phir aik khayaal aaya ke shayad roz mehashar ka manzar bhi kuch aisa hi hoga.
jab tamam insanon se hisaab liya jaye ga .
aik taraf ghareebon ka hisaab ho raha ho ga .
do waqt ki rootti, kapra. haqooq Allah aur haqooq alabad .
aik taraf ameeron ka hisaab ho raha ho ga .
plaze, dukanain, fiktryan, gariyaan, bngle, sona aur ziwarat
mulazim. paisa. halal haraam. aish o Aram . zkoh. haqooq Allah . haqooq alabad. .. .
itni cheezon ka hisaab kitaab dete hue paseenay se sharabor aur khauf se thar thar kaamp rahay hon ge .
tab shayad isi naai ki terhan ghareeb un ameeron ko dekh rahay ho ge .
chehray par aik ajeeb sa sukoon aur shayad dil hi dil mein keh rahay hon ge. .. . !
" aj hee te gurbat di chas aayi ae. .. .
Allah Tahala se dua hai ke hamein har har Nemat ka shukar ada karne ki aur Allah ki Raza ke mutabiq istemaal aur taqseem karne ki tofeq ataa farmaiye. Aameen