Saib Ki Qeemat - Andhi Gungi Behri Langri Larki  Se Shadi - Sabaq Amoz
saib-ki-qeemat-chand-ka-tukda-sabaq-amoz-waqia
امام اعظم ابوحنیفہؒ اور ایک سیب

ایک بزرگ نہر کے کنارے جا رہے تھے، ان کو بھوک بھی لگی ہوئی تھی، مگر فقیر بندے تھے خرچ کرنے کے لیے پاس کچھ تھا نہیں، نہر میں ایک سیب دیکھا جو بہتا ہوا جا رہا تھا انہوں نے سیب لیا اور اس کو کھا لیا، بھوکے بندے کی تو سمجھ بھی کام نہیں کرتی۔پیٹ نہ پیا روٹیاں تو دے گنا کھوٹیاں۔
کھانے کے بعد خیال گزرا کہ یہ سیب تو میرا نہیں تھا، یہ تو کسی اور کا تھا، میں نے بغیر اجازت کھا لیا، مجھے اس بندے سے یا تو معافی مانگنی ہے یا قیمت ادا کرنی ہے، چنانچہ جدھر سے پانی آ رہا تھا (اسٹریم، Stream) ادھر جانے لگے، آگے کچھ دور جانے کے بعد دیکھا کہ ایک باغ ہے، جس میں سیب کے درخت ہیں، سمجھ گئے یہاں سے گرا ہو گا۔
باغ کے مالک سے ملے، اور کہا کہ میں نے آپ کے درخت کا سیب کھا لیا ہے لہٰذا یا تو معاف کر دیں یا قیمت لے لیں، اس نے کہا معاف تو میں نہیں کرتا، ہاں قیمت ادا کر دو، کہنے لگے جو بھی قیمت ہو گی مزدوری کرکے دے دوں گا، اس نے کہا میری ایک بیٹی ہے، گنگی ہے زبان سے، آنکھوں سے اندھی ہے، کانوں سے بہری ہے، پاؤں سے لولی لنگڑی ہے، لہٰذا اس کے ساتھ تم نکاح کرو اور ساری زندگی اس کی خدمت کرو اس کو خوش رکھو، یہ قیمت دینی پڑے گی۔
فکر میں پڑ گئے مگر دل نے کہا کہ دیکھو یہ مجاہدہ برداشت کرنا آسان، قیامت کے دن اللہ رب العزت کے سامنے ملزم بن کر کھڑا ہونا یہ بڑا مشکل کام، آخر کار تیار ہو گئے، نکاح ہو گیا، جب وہ اپنی بیوی کے پاس گئے تو حیران، چاند کا ٹکڑا آنکھیں خوبصورت، بولنے والی، سننے والی، سمجھنے والی، حیران ہو کر اس سے پوچھا کہ تم اپنے باپ کی ایک ہی بیٹی ہو یا کوئی اور بھی تمہاری بہن ہے؟
اس نے کہا میں ایک ہی بیٹی ہوں،خیر رات گزر گئی، اگلے دن سسر سے ملاقات ہوئی، سسر نے پوچھا کہ بتاؤ مہمان کو کیسا پایا، کہا آپ نے تو فیجوکیشن کچھ اور ہی بتائی تھی،مگر وہ تو ایسی نہیں وہ بہت دانا، بینا، آپ کے بتلائے ہوئے ہر عیب سے مبرا ہے، انہوں نے فرمایا، ہاں! یہ میری بیٹی ظاہر حسن جمال بھی رکھتی تھی اور باطنی اعتبار سے بھی، حدیث کی عالمہ قرآن کی حافظہ ہے، میں چاہتاتھا اس کے لیے کوئی ایساخاوند ڈھونڈوں کہ جس کے دل میں اللہ کا خوف ہو، کیونکہ جس کے دل میں خوفِ خدا نہ ہو وہ بیوی کے حقوق صحیح ادا نہیں کر سکتا،
(اسی لیے سورۂ نساء پڑھ کر دیکھیں ہر دوسری چوتھی آیت میں اتقوا اللہ اتقوااللہ ہے، کیوں کہ اللہ تعالیٰ جانتے ہیں کہ جب تک اللہ تعالیٰ کاخوف دل میں پیدا نہیں کریں گے وہ دوسروں کے حقوق کو صحیح ادا نہیں کر سکیں گے) تو میں چاہتا تھا کہ کوئی ایسا بندہ ملتا، جب تم نے ایک سیب کی وجہ سے معافی مانگی، تو میں نے کہا اس کے دل میں خوفِ خدا ہے اس لیے میں نے اپنی بیٹی کے لیے تمہیں خاوند کے طور پر تجویز کیا، دونوں ساتھ رہنے لگے، اللہ رب العزت نے انہیں بیٹا دیا جس کا نام انہوں نے نعمان رکھا، یہ نعمان بڑا ہو کر امام اعظم ابوحنیفہؒ ہوئے۔
Aik buzurag neher ke kinare ja rahay they, un ko bhook bhi lagi hui thi, magar faqeer bande they kharch karne ke liye paas kuch tha nahi, neher mein aik saib ( apple) dekha jo behta howa ja raha tha unhon ny saib liya aur is ko kha liya, bhukay bande ki to samajh bhi kaam nahi karti. pait nah piya rotian to day gina khotian. khanay ke baad khayaal guzra ke yeh saib to mera nahi tha, yeh to kisi aur ka tha, mein ny baghair ijazat kha liya, mujhe is bande se ya to maffi maangni hai ya qeemat ada karni hai, chunancha

chunancha jidhar se pani aa raha tha odhar jaanay lagey, agay kuch daur jaanay ke baad dekha ke aik baagh hai, jis mein saib ke darakht hain, samajh gaye yahan se gira ho ga.
baagh ke maalik se miley, aur kaha ke mein ny aap ke darakht ka saib kha liya hai lehaza ya to maaf kar den ya qeemat le len, is ny kaha maaf to mein nahi karta, haan qeemat ada kar do, kehnay lagey jo bhi qeemat ho gi mazdoori karkay day dun ga, is ny kaha meri aik beti hai, goongi hai zabaan se, aankhon se andhi hai, kaanon se behri hai, paon se lolly langrhi hai, lehaza is ke sath tum nikah karo aur saari zindagi is ki khidmat karo is ko khush rakho, yeh qeemat dainee parre gi.

 fikar mein par gaye magar dil ny kaha ke dekho yeh Mujahida bardasht karna aasaan, qayamat ke din Allah rab ulizzat ke samnay mulzim ban kar khara hona yeh bara mushkil kaam, aakhir kaar tayyar ho gaye, nikah ho gaya,
jab woh apni biwi ke paas gaye to heran, chaand ka tukda ankhen khobsorat, bolnay wali, suneney wali, samajhney wali, heran ho kar is se poocha ke tum apne baap ki aik hi beti ho ya koi aur bhi tumharee behan hai? is ny kaha mein aik hi beti hon, kher raat guzar gayi, aglay din sasur se mulaqaat hui, sasur ny poocha ke batao maheman ko kaisa paaya, kaha aap ny to kuch aur hi bataaye thi, magar woh to aisi nahi woh bohat Dana , Beena , aap ke batlaye hue har aaib se mubara hai, unhon ny farmaya, haan! yeh meri beti zahir husn jamal bhi rakhti thi aur baatini aitbaar se bhi, hadees ki Alima quran ki Hafza hai,
mein chahtatha is ke liye koi aisa khawand dhundon ke jis ke dil mein Allah ka khauf ho, kyunkay jis ke dil mein khofِe kkhuda nah ho woh biwi ke haqooq sahih ada nahi kar sakta, ( isi liye surah nesa parh kar dekhen har doosri chothi aayat mein اتقوااللہ اتقوااللہ hai, kyun ke Allah taala jantay hain ke jab taq Allah taala kakhof dil mein peda nahi karen ge woh dosaron ke haqooq ko sahih ada nahi kar saken ge ) to mein chahta tha ke koi aisa bandah milta, jab tum ny aik saib ki wajah se maffi mangi, to mein ny kaha is ke dil mein khofِe kkhuda hai is liye mein ny apni beti ke liye tumhe khawand ke tor par tajweez kya,

 dono sath rahay lagey, Allah rab ulizzat ny inhen beta diya jis ka naam unhon ny Noman rakha, yeh Noman bara ho kar Imam e Azam Abu Hanifah hue

mazeed waqiat parhne ke liye yahan click karein