Sabaq Amoz Kahaniyan

[Sabaq Amoz Kahaniyan][twocolumns]

Jokes And Funny

[Jokes & Funny Posts][bleft]

Dilchasp O Ajeeb

[Dilchasp O Ajeeb Haqaiq][twocolumns]

Poetry

[Poetry][bsummary]

Titanic Ki Kahani - Titanic Story - Titanic History - Titanic Ka Waqia

Titanic Ki Kahani - Titanic Story - Titanic History - Titanic Ka Waqia - Urdu Hindi

titanic-ki-kahani-titanic-story-Urdu-Hindi

 کیا آپ کو معلوم ہے کہ ٹائی ٹینک بحری جہاز جو کہ 1912ء میں 14 اور 15 اپریل کی درمیانی شب کو سمندر میں ڈوب گیا تھا (آج 104 سال ہوگئے) اس کے متعلق اس جہاز کے مالک نے کیا دعویٰ کیا تھا۔؟

یہ ایک مشہور برطانوی مسافر بحری جہاز تھا جواپنے پہلے ہی سفر کے دوران ایک برفانی تودے سے ٹکرا کر ڈوب گیا تھااس حادثے میں ہلاک ہونے والے٭1512 ٭افراد شامل تھے۔ٹائٹینک نے امریکی شہر نیویارک کے لیے اپنے سفر کا آغاز برطانوی شہر ساؤتھمپن سے 10 اپریل1912ءکو کیا تھا اور یہ شمالی بحر اوقیانوس میں ڈوب گیا۔اسکا ملبہ اب بھی سمندر میں3800میٹر گہرائی میں موجود ہے۔ اپنے سفر کے آغاز کے چوتھے اور پانچویں روز کی درمیانی شب اس میں سوار 1512 مسافروں کی زندگی کا چراغ اس وقت گُل ہوگیا جب یہ سمندر کا بادشاہ برف کے گالے سے ٹکرا کر دوٹکڑے ہوگیا۔ لائف بوٹس کے ذریعے ٹائی ٹینک کے صرف 724 مسافرزندہ بچ پائے۔ چونکہ اس کے متعلق یہ ہی مشہور تھا کہ یہ کبھی نہیں ڈوبے گا ۔ اس لئے اس پر زندگی بچانے والی کشتیاں بہت کم رکھی گئی تھیں۔ اگر لائف بوٹس زیادہ ہوتی تو سارے لوگ بچ سکتے تھے۔ کیونکہ اس جہاز کو ٹکر کے بعد ڈوبنے میں تقریبا 2 گھنٹے 40 منٹ لگے تھے۔

کہا جاتا ہے مرنے والوں کی تعداد 1512 سےبھی کافی زیادہ تھی کیونکہ جن لوگوں کی جہاز کے عملے سے جان پہچان تھی۔ان میں سےبھی بہت سے لوگ ٹکٹ کے بغیر اس پر سوار ہو گئے تھے جن کا کوئی ریکارڈہی موجود نہیں۔

بچنے والوں میں سےکمپنی کا مالک "اسمے "بھی شامل تھا جو خواتین اور بچوں کوڈوبتے جہازکو چھوڑ کر ایک کشتی کے ذریعے نکل گیا۔ اس خود غرضی پر وہ پوری زندگی نفرت کا نشانہ بنا رہا ۔اسے ” ٹائی ٹینک کا بزدل ترین شخص کہا جاتا تھا۔“اس کا نام ”Brute Ismy“ تھا۔" اسمے "اکتوبر 1937ءکو گوشہ تنہائی میں چل بسا۔ دوسری طرف جہاز کا پائلٹ ایڈورڈ جان سمتھ بیشترعملے کے ساتھ خواتین اور بچوں کو بچانے کی کوشش میں خود ڈوب کر انسانیت پر احسان کر گیا۔وہ آخری آدمی تھا جس نے جہاز سے چھلانگ لگائی تھی ۔اس کے بارے میں لائف بوٹ کے چلانے والے نے بتایا تھا کہ ایک آدمی آخری کشتی کی طرف تیرتے ہوئے ہوئے لپکا تو ایک مسافر نے کہا ”یہ پہلے ہی اوور لوڈہے“ اس پرتیراک پیچھے ہٹ گیا اور کہا 

"All right boys. Good luck and God bless you"

یہ جہاز کا پائلٹ 62 سالہ ایڈورڈجان سمتھ تھا۔دوسروں پر اپنی جاں نچھاور کرنے کے عظیم جذبے کو خراجِ تحسین پیش کرنے کے لئے اس کا مجسمہ سٹیفورڈ میں نصب کیا گیا ہے۔

اس جہاز کے بارے میں اس کی تیاری مکمل ہونے پراخبار میں آرٹیکل چھپا تھا۔کہ کبھی نہ ڈوبنے والا بحری جہاز تیا ر ہوگیا ہے۔

اور اس کے مالک نے تو یہ دعویٰ کردیا تھا ”اسے طوفانِ نوح توکیا ،خدا بھی نہیں ڈبوسکتا“ (نعوذباللہ) یہ وہ دعویٰ تھا۔

جو لنگر اٹھانے کے موقع پر اسکے مالک "بروٹے اسمے" نے کیا تھا۔ اس نے ٹائی ٹینک کو جدید ، خوبصورت، آرام دہ،پرتعیش اور مضبوط بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی تھی ۔ 

خدا کا نام لے کر سمندر میں کشتی ڈال دی جائے تو وہ منہ زور موجوں سے بچ کر نکل سکتی ہے لیکن تکبر سے سمندر میں اتاراجانے والادیو ہیکل جہاز بھی ممکن ہے کنارے نہ لگ سکے۔ یہی کچھ ٹائی ٹینک کے ساتھ ہوا 

ٹائی ٹینک نے اپنی تخلیق کے بعد محض چار دن کا سفر ہی کیا اور قیامت تک کے لئے غرور کرنے والوں کے لئے عبرت کی نشانی بن گیا

Kya aap ko maloom hai ke Titanic behri jahaaz jo ke 1912  mein 14 aur 15 April ki darmiyani shab ko samandar mein doob gaya tha , us ke mutahliq us jahaaz ke maalik ne kya daawa kya tha. ?

yeh aik mashhoor Bartanwi musafir behri jahaaz tha jo apnay pehlay hi safar ke douran aik barfani today se takra kar doob gaya thaa - haadsay mein halaak honay walay ٭1512 afrad shaamil they. Titanic ne Amrici shehar New York ke liye apne safar ka aaghaz Bartanwi shehar Southampton se 10 April 1912 ko kya tha aur yeh shumali behar oqiyanus mein doob gaya. uska malba ab bhi samandar mein 3800 meter geherai mein mojood hai. apne safar ke aaghaz ke chouthay aur panchwin roz ki darmiyani shab is mein sawaar 1512 musafiron ki zindagi ka chairag is waqt gُl hogaya jab yeh samandar ka badshah barf ke gaalay se takra kar dotkrhe hogaya. life boots ke zariye tie tank ke sirf 724 musafir zinda bach paye. chunkay is ke mutaliq yeh hi mashhoor tha ke yeh kabhi nahi dobay ga. is liye is par zindagi bachanay wali kashtiyan bohat kam rakhi gayi theen. agar life boats ziyada hoti to saaray log bach satke they. kyunkay is jahaaz ko takkar ke baad doobnay mein taqreeban 2 ghantay 40 minute lagey they .
mazeed aisi maloomat ke liye yahan click karein

kaha jata hai marnay walon ki tadaad 1512 se bhi kaafi ziyada thi kyunkay jin logon ki jahaaz ke amlay se jaan pehchan thi. un mein se bhi bohat se log ticket ke baghair is par sawaar ho gaye they jin ka koi record mojood nahi .
bachney walon mein se company ka maalik" Ismy " bhi shaamil tha jo khawateen aur bachon ko jahaz mein doobta chore kar aik kashti ke zariye nikal gaya. is khud gharzi par woh poori zindagi nafrat ka nishana bana raha. usay ” Titanic ka buzdil tareen shakhs kaha jata tha. “as ka naam ”bruce ismy“ tha." ismy " october 1937 ko gosha tanhai mein chal basa.
 doosri taraf jahaaz ka pilot edward j smith beshter amly ke sath khawateen aur bachon ko bachanay ki koshish mein khud doob kar insaaniyat par ahsaan kar gaya. woh aakhri aadmi tha jis ne jahaaz se chhalang lagai thi. is ke baray mein life boat ke chalanay walay ne bataya tha ke aik aadmi aakhri kashti ki taraf tairtay hue hue lapka to aik musafir ne kaha ”yeh pehlay hi over load hai “ is per teraak peechay hatt gaya aur kaha

" all right boys. good luck and god bless you "

yeh jahaaz ka pilot 62 sala Edward J Smith tha. dosaron par apni jaan nichhawar karne ke azeem jazbay ko khrajِ tehseen paish karne ke liye is ka mujasma stiford mein nasb kya gaya hai .
is jahaaz ke baray mein is ki tayari mukammal honay per akhbaar mein article chhupa tha. ke kabhi nah doobnay wala behri jahaaz tayar  hogaya hai .
aur is ke maalik ne to yeh daawa kardiya tha ”ise tofanِ Nooh to kya, khuda bhi nahi dabo skta“ ( navzbillah )
yeh woh daawa tha .jo langar uthany ke mauqa par uskay maalik" bruce ismy" ne kya tha. is ne Titanic ko jadeed, khobsorat, Aram da, prtaysh aur mazboot bananay mein koi kasar nahi choari thi .

kkhuda ka naam le kar samandar mein kashti daal di jaye to woh mun zor moajoon se bach kar nikal sakti hai lekin taqqabur se samandar mein otara jany wala deo heakal hekal jahaaz bhi mumkin hai kinare nah lag sakay. yahi kuch titanic ke sath howa
titanic ne apni takhleeq ke baad mehez 4 din ka safar hi kya aur qayamat taq ke liye ghuroor karne walon ke liye Ibrat ki nishani ban gaya