Green Children Of Woolpit In Urdu Hindi - Herat Angez Purisrar Bache

Green Children Of Woolpit In Urdu Hindi - Herat Angez Purisrar Bache
urdu-hindi-herankun-maloomat

پُراسرار افراد
 Herat Angez Purisrar Bache
 وولپٹ گاؤں کے سبز بچے

دنیا کی تاریخ میں ایسے کئی پراسرار افراد کا ذکر ملتا ہے جن کی حقیقت آج تک ایک راز ہے یہ اشخاص بغیر کسی شناخت کے دنیا کے سامنے آتے ہیں' تاریخ میں جگہ بناتے ہیں اور پھر اچانک غائب ہوجاتے ہیں٬ ان کے بارے میں کوئی نہیں جانتا کہ وہ کون تھے؟ اور کہاں سے آئے؟ اور کہاں چلے گئے؟
 انہیں پُراسرار لوگوں میں سے ایک نام ہے ۔

Green Children of Woolpit
green-children-of-woolpit-urdu-hindi
بارہویں صدی عیسوی میں دو عجیب وغریب  بچوں کاتذکرہ  ملتا ہے۔جن کا رنگ حیرت انگیز طور پر درخت کے پتوں کی طرح سبز تھا۔کنگ سٹیفن(دورِ حکومت 1135ء تا 1154ء)  کے دور میں انگلینڈ کے علاقے سفولک کے گاؤں وولپٹ میں فصلوں کی کٹائی کے وقت دو عجیب و غریب بہن بھائی گاؤں والوں کو  ایک بھیڑیوں کے گڑھے سے ملے۔
 یہ عجیب و غریب زبان بولتے تھے۔اور پرندوں کی غذا دانا وغیرہ کھاتےتھے۔ جلد ہی یہ دونوں بچے گاؤں والوں سے گھل مل گئے اور انہوں نے  انگریزی زبان بھی سیکھ لی۔ اور انہوں نے دیگر اشیا بھی کھانا شروع کردیں۔  وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ان کی جلد کا سبز رنگ بھی جاتا رہا- پھر اچانک ان بچوں میں سے لڑکا  بیمار ہوا اور انتقال کر گیا۔ لڑکی  نے جب انگریزی زبان سیکھ لی تو اس نے بتایا کہ ہم سینٹ مارٹن لینڈ نامی جگہ سے آئے ہیں جو زمین کے نیچے واقع ہے۔اس جگہ سورج کی روشنی نہیں پہنچتی اور وہاں سب کچھ سبز رنگ کا ہوتا ہے۔وہاں پر تمام لوگ بھی سبز رنگ کے ہی ہوتے ہیں۔جب لڑکی سے اس جگہ پہنچنے کے بارے میں پوچھا گیا تو اس کو کچھ یاد نہیں تھا کہ وہ کیسے اس گاؤں میں پہنچے تھے۔بس اس کو اتنا یاد تھا کہ وہ اپنے باپ کے ساتھ زیرِ زمین جانوروں کے ریوڑ کو چرا رہے تھے توانہوں نے ایک آواز سنی تو اس گاؤں وولپٹ میں بھیڑیوں کے گڑھے میں اپنے آپ کو پایا جہاں سے آپ لوگ ہمیں اپنے گھر لے آئے ہو۔
 لڑکی بھی کچھ عرصہ زندہ رہنے کے بعد موت کا شکار ہوگئی۔ لیکن ان کی اصل حقیقت کے بارے میں کوئی بھی جان نہیں سکا۔ کیونکہ اس گاؤں میں ان کے والدین بھی موجود نہ تھے۔
کیا یہ کسی دوسری دنیا سے آئے تھےیا یہ بچے جھوٹ بول رہے تھے؟ اس سوال کا جواب ان کی موت کے ساتھ ہی گم ہوگیااورآج تک یہ سب کچھ ایک راز ہی ہے۔
ان بچوں کا تذکرہ   تاریخ دان"ولیم آف نیوبرگ"نے اپنی کتاب "ریرم اینگلی کیرم"(یعنی ہسٹری آف انگلش افیرز) 1189ء میں کیا ہے ۔
اسی طرح ایک اور تاریخ دان "رالف آف کینگی شل" نے 1220ء میں اپنی کتاب "کرونیکم اینگلی کیرم "میں ان بچوں کا تذکرہ کیا ہے۔
اس کہانی کو کچھ شعراء نے اپنی نظموں میں بھی لکھا ہے اور 1934ء میں ایک ناول بھی ان بچوں پر لکھا جاچکا ہے۔ جس کا نام تھا"گرین چائلڈ"۔ اس کے علاوہ بھی کچھ رائٹرز نے اس کہانی کو اپنے اپنے انداز میں لکھا ہے۔
میرا خیال ہے اس کہانی میں بہت سی ایسی  باتیں شامل ہوگئی ہیں جن کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں۔ جیسے ہماری لوک داستانوں میں بہت سی ایسی باتیں شامل ہیں جن کا حقیقت سے دور کا بھی واسطہ نہیں  جن میں ہیر رانجھا۔ سسی پنوں۔ لیلہ مجنوں۔ سوہنی مہیوال۔ نوری جام تماچی وغیرہ شامل ہیں۔

بہرحال ان کی اصل حقیقت اور ان کا یہ کہنا کہ وہ کسی دوسری دنیا سے آئے ہیں اور ان کا رنگ اتنا سبز کیوں تھا۔ آج تک ایک معمہ ہی  ہے۔



Duniya ki tareekh mein aisy kai purisrar afrad ka tazkira milta hai jo duniya ke samny aate hain , tareekh mein jaga banaty hain aur phir achanak ghayeb ho jaty hein , on ke bary mein koi ni janta ke wo kon thy kahan se aye thy aur kahan chaly gaye

oni purisrar afrad mein se aik name hai

 Green Children Of Woolpit

Barhwein sadi eeswi mein 2 ajeeb o ghareeb bachon ka tazkira milta hai jin ka rung herat angez tor per drakht ke patton ke trah sabz tha . King Stefan ke dore hakoomat (1135 to 1154 ) mein Safolk ke gaon woolpit mein faslon ki katai ke waqt 2 ajeeb o ghareeb behn bhai gaon walon ko mily
ye ajeeb o ghareeb zaban bolty thy aur parindon ki ghaza khaty thy , jald hi ye dono bachy gaon walon se mil ghul gye aur ono ne angrezi zaban bhi seekh li aur deeghar ashya bhi khana shuru kar di . waqt guzerny ke sath sath onki jild ka sabz rang bhi jata raha aur achanak on bachon mein se larka beemar howa aur inteqaal kar gya
larki ne jab angrezi zaban seekh li to os ne bataya ke hum saint martin land nami jagha ne aye hain jo zameen ke neechy waqia hai . os jga sooraj ki roshni ni pohnchti aur sub kuch sabz rang ka hota hai aur wahan per tamam log bhi sabz rang ke he hoty hain. jub larki se os jagha per pohnchny ke bare mein poocha gya to ose kuch yaad ni tha . os ko bus itna yaad tha ke wo apny ami abu ke sath zameen ke nechy janwaron ko chara rahy thy to ono ne aik awaz suni aur phir wahan se bhario ke ghary mein apny aap ko paya jahan se aap log onko apny ghar le aye

larki bhi kuch arsa zinda rehny ke bad mar gai lakin onki asal haqeeqat ke bare mein koi bhi na jaan saka kyu ke os gaon mein on ke waldain bhi mojod na thy

kia ye kisi doosri duniya se aye thy ya ye bache jhoot bol rahy thy ? is sawal ka jawab on ki mout ke sath he gum ho gya aur aaj tak ye aik raz hee hai

in bachon ka tazkra tareekh dan william of newburg ne apni kitab rarem angli carem 1189 mein kiya
isi trah aik aur tareekh dan ralfh of congishal ne 1220 mein  apni kitab cronekam angli karem mein in bachon ka tazkira kia hai
is kahani ko kuch poets ne apni nazmo mein bhi likha hai aur 1934 mein in bachon per aik noval bhi likha ja chuka hai jiska name tha green child . is ke ilawa bhi kuch writers  ne ise apni apni kitab mein likha

mera khiyal hai is kahani mein boht si aisi batein shamil hogai hain jinka haqeeqat se kuch tahalaq ni jese hamari lok dastano mein boht so aisi batein shamil hein jinka haqeeqat se door door tak wasta ni jin mein heer ranjha , sasi punoo , laila majnu , sohni mahewal shamil hain
behrhal onki asal haqeeqat aur onke bare mein ye kehna ke wo doosri duniya se aye thy aur onka rang itna sabz ku tha aaj tak aik raaz hi hai

agar post pasand ayee hai to ise apny doston se bhi share karein

  اگر پوسٹ پسند آئے تو لائک کریں اور اپنے دوستوں کے ساتھ شئیر کریں۔