Khilono Ki Dukaan - Very Sad Story In Urdu - Rula Dene Wala Waqia Urdu

Khilono Ki Dukaan - Very Sad Story In Urdu - Rula Dene Wala Waqia Urdu - رلا دینے والی کہانی - اردو کہانی  - گڑیا کی کہانی
very-sad-story-in-urdu

میری کھلونوں کی دکان ہے،انار کلی بازار میں۔۔۔ میرے پاس دیسی بدیسی ہر قسم کا کھلونا ہے، میں گاہک کی جیب اور ظاہری حالت سے اندازہ لگا لیتا ہوں کہ اس کی قوت خرید کتنی ہے، میرے پاس سو روپے سے لے کر ہزاروں روپے والے بھی کھلونے ہیں۔

کافی دنوں سے میں یہ نوٹ کر رہا تھا کہ کوئی مسلسل میری دکان کی نگرانی کر رہا ہے مجھے شک ہوا کہ کہیں کوئی چور تو میری دکان کی ریکی نہیں کر رہا!!!
آخر ایک دن میں نے اُسے جا لیا۔ ارے! یہ کیا یہ تو کوئی بچی تھی چھ سات سال کی۔ ہلکے گلابی اور نیلے رنگ کے پھٹے ہوئے فراک اور پائجامے سے معلوم ہو گیا کہ کوئی فقیرنی تھی۔
میں نے اُسے ڈانٹ کر پوچھا: “اوئے تُو میری دکان میں کب گُھسی؟”
اُسکا رنگ اُڑ گیا۔ بیچاری تھر تھر کانپ رہی تھی، مگر مجھے کوئی ترس نہیں آیا۔
یہ سب فقیر جان کر اپنے بچوں کو ایسی حالت میں رکھتے ہیں تاکہ لوگ ترس کھا کر زیادہ بھیک دیں۔۔۔
“دکان سے کوئی چیز تو نہیں اُٹھائی؟ “وہ نفی میں سر ہلانے لگی۔ اس کی آنکھوں میں آنسو بھرے ہوئے تھے۔
“اگر دوبارہ ادھر نظر آئی تو بہت ماروں گا اور پولیس میں دے دوں گا، چل دوڑ جا۔”
دکان میں گاہکوں کی موجودگی کی وجہ سے میں نے اُسے دھکے دینے سے گریز کیا۔
وہ معصوم بچی دوڑتی ہوئی میری دُکان سے باہر نکل گئی۔
“چور ہوتے ہیں جی، دُکانوں میں گھس کر دُکانوں کا سارا حال معلوم کرتے ہیں، پھر ان کے بڑے دکان لوٹ لیتے ہیں۔”
میری دکان میں کھڑی بیگمات نے میری ہاں میں ہاں ملائی۔۔۔
اگلے دن میں نے جب دکان کھولی تو وہ دکان کے باہر کھڑی تھی، اور شوکیس میں لگے کھلونوں کو دیکھ رہی تھی۔
“تو پھر آگئی؟”
“صاب جی ، صاب جی۔۔۔” میں نے سُنی ان سُنی کر دی۔۔۔
“اے کھڈونا کِنے دا اے؟؟” (یہ کھلونا کتنے کا ہے) اُس نے پنجابی میں پوچھا۔۔۔
میں نے اسے جواب نہ دیا۔۔۔۔ وہ پھر بولی۔۔۔۔ “صاب جی۔۔۔۔”
“تو ادھر سے جاتی ہے کہ نہیں۔۔۔۔ “میں نے اُسے بازو سے پکڑ کے پیچھے دھکیلا۔ “گندے ہاتھ نہ لگانا شیشے کو۔۔۔۔”
وہ زور کا جھٹکا لگنے سے گر گئی، کمزور سی تو تھی۔۔۔۔
“او والا کھڈونا کِنے دا اے۔۔۔۔” اب کی بار اُس نے دور سے اشارہ کیا۔
میں نے اُسے بھگانے کے لیے رقم تین گُنا زیادہ بتائی۔ “وی ہزار روپے دا۔” (بیس ہزار)
یہ یہ انسانی فطرت ہے کہ۔۔۔ غریب کو اس کی غریبی کا احساس دلانے اور اپنی برتری ثابت کرنے کے لیے ہم امیر لوگ اکثر اپنی کم قیمت اشیاء کی قیمت بھی زیادہ بتاتے ہیں۔
وہ ڈال ہاؤس کے بارے میں پوچھ رہی تھی، رقم سُن کر اُسے سمجھ ہی نہ آئی، کہ بیس ہزار کتنے ہوتے ہیں۔۔۔ دور کھڑی رہی۔۔۔
میں دکان میں چلا گیا۔ مگر وقتاً فوقتاً اسے دیکھنے کے لیے باہر بھی آتا رہا۔۔۔ وہ رقم سُن کر جا چُکی تھی۔۔۔
دو چار دن آرام سے گزر گئے وہ نظر نہ آئی۔۔۔ یا میں نے توجہ نہ دی،کہ میرے ملازم نے بتایا: “میں جب دوپہر تھوڑی دیر آرام کے لیے گھر جاتا ہوں تو کوئی بچی شوکیس کے باہر بیٹھ کر خیالوں میں ڈال ہاؤس کے ساتھ کھیلتی ہے ،اور مجھے آتا دیکھ کر بھاگ جاتی ہے”۔۔۔
“اچھا”۔۔۔۔ اگلے دن میں گھر جانے کی بجائے سامنے والی دکان میں جا کر بیٹھ گیا۔۔۔
وہ مقررہ وقت پر آئی اور شوکیس کے باہر بیٹھ کر اس نے پہلے ادھر اُدھر دیکھا۔پھر اشاروں سے کبھی “ڈال ہاؤس “میں موجود چیزوں کی جگہ بدلتی، گڑیا کو اوپر نیچے رکھتی۔۔۔۔ اسی طرح کھیلتے کھیلتے اسے میرے آنے کا احساس ہوا اور وہ بھاگ گئی۔۔۔
وقت گزرتا گیا۔۔۔ وہ اب بھی آتی۔۔۔ اور کھیل کر چلی جاتی ۔
مجھے یہ کھیل اچھا لگنے لگا، کبھی چاہتا اسے کھلونا دے دوں، مگر پھر میں اس کھیل سے محروم ہو جاتا۔۔۔ یا پھر مجھ میں اتنی اخلاقی جرات نہیں تھی کہ میں اتنا مہنگا کھلونا ایک فقیرنی کو دے دیتا۔۔۔
میں نے اُسکا کھلونا نہیں بیچا۔۔۔ کئی گاہکوں نے مجھے کھلونے کی منہ مانگی قیمت بھی دینے کی کوشش کی،مگر میرا دل نہیں چاہا۔۔۔۔ میرے سامنے اُسکا میلا سا چہرہ آ جاتا۔۔۔۔ اور میں چاہتے ہوئے بھی ڈال ہاؤس بیچ نہیں سکا۔۔۔۔
اس نے آنا بند کر دیا ہے۔۔۔ سال بھی تو کتنے بیت گئے۔۔۔۔ میرے بیٹے نے ڈال ہاؤس کو شوکیس سے ہٹانے کے لیے کہا تو میں نے ہٹانے نہیں دیا۔۔۔
ہو سکتا ہے ۔۔وہ آئے۔۔۔۔ مگر اب تو وہ بڑی ہو گئی ہو گی۔۔۔
احساسِ ندامت جینے نہیں دیتا۔۔۔ کاش میں اُسے ڈال ہاؤس دے دیتا۔۔۔
اسے ڈھونڈنے کے لیے کچی بستی بھی گیا۔۔۔۔ وہاں تو سب کی شکلیں ایک جیسی ہیں۔۔۔ وہی گندے میلے چہرے اور پھٹے پرانے کپڑے۔۔۔ مگر۔۔۔ پھر ایک دن وہ آگئی۔۔۔
میری دکان میں ایک نوجوان لڑکی داخل ہوئی۔۔ ساتھ اُسکا’ ملازم’ بھی تھا۔۔۔
یہ گڑیا گھر خریدنا ہے مجھے۔۔۔ وہ بولی۔۔۔ بیس ہزار اکھٹے کرنے میں بہت ٹائم لگ گیا مجھے۔۔۔
پر شکر ہے تم نے اسے بیچا نہیں۔۔۔ اس نے غمزدہ مسکراہٹ کے ساتھ یہ جملہ بولا۔۔۔

ڈال ہاؤس بِک چُکا تھا۔۔۔ اور قیمت تھی ۔۔۔ میرا تا حیات احساسِ ندامت ! 😢

Khilono Ki Dukaan - Very Sad Story In Urdu - Rula Dene Wali Kahani - Rula Dene Wala Waqia

meri khilono ki dukaan hai, anar kali bazaar mein. .. mere paas desi pardesi har qisam ka khilona hai, mein gahak ki jaib aur zahiri haalat se andaza laga laita hon ke is ki qowat khareed kitni hai, mere paas so rupay se le kar hazaron rupay walay bhi khilonay hain .

kaafi dinon se mein yeh note kar raha tha ke koi musalsal meri dukaan ki nigrani kar raha hai mujhe shak howa ke kahin koi chor to meri dukaan ki reki nahi kar raha! ! !

aakhir aik din mein naay ussay ja liya. arrey! yeh kya yeh to koi bachi thi chay saat saal ki. halkay gulaabii aur neelay rang ke phatay hue firaak aur paijame se maloom ho gaya ke koi faqeeran thi .


mein ney ussay daant kar poocha : “ oye  too meri dukaan mein kab ghusi? ”

usakaa rang urr gaya. baichari thar thar kanp rahi thi, magar mujhe koi taras nahi aaya .

yeh sab faqeer jaan kar apne bachon ko aisi haalat mein rakhtay hain taakay log taras kha kar ziyada bheek den. . .

“dukaan se koi cheez to nahi uthai? “wo nafi mein sir hilanay lagi. is ki aankhon mein ansoo bharay hue they .

“ agar dobarah idhar nazar aayi to bohat maroo ga aur police mein day doun ga, chal door ja. ”

dukaan mein gahkon ki mojoodgi ki wajah se mein ney ussay dhakkay dainay se guraiz kya .

woh masoom bachi daurti hui meri dukan se bahar nikal gayi .

“ chor hotay hain jee, dُkanon mein ghus kar dukanon ka sara haal maloom karte hain, phir un ke barray dukaan lout letay hain. ”

meri dukaan mein khari bigmat ne meri haan mein haan malai. . .

aglay din mein ne jab dukaan kholi to woh dukaan ke bahar khari thi, aur shokis mein lagey khilonon ko dekh rahi thi .

“ tu phir aagai? ”

“ sahib jee, sahib jee. .. ” mein ne suni un suni kar di. . .

“ ay khidona kiney da ae? ? ” ( yeh khilona kitney ka hai ) uss ne punjabi mein poocha. . .

mein nay usay jawab nah diya. .. . woh phir boli. .. . “ sahib jee. .. . ”

“ tu idhar se jati hai ke nahi. .. . “min nay ussay baazu se pakar ke peechay dhkila. “ gandey haath nah lagana sheeshay ko. .. . ”

woh zor ka jhatka lagnay se gir gayi, kamzor si to thi. .. .

“ oh wala khidona kiney da ae. .. . ” ab ki baar uss nay door se ishara kya .

mein nay ussay bhaganay ke liye raqam teen gunna ziyada batayi. “ 20 hazaar rupay da. ” ( bees hazaar )

yeh yeh insani fitrat hai ke. .. ghareeb ko is ki gareebi ka ehsas dilanay aur apni bartari saabit karne ke liye hum Ameer log aksar apni kam qeemat ashya ki qeemat bhi ziyada batatay hain .

woh daal house ke baarey mein pooch rahi thi, raqam sun kar ussay samajh hi nah aayi, ke bees hazaar kitney hotay hain. .. daur khari rahi. . .

mein dukaan mein chala gaya. magar waqatan fawaqtan usay dekhnay ke liye bahar bhi aata raha. .. woh raqam sun kar ja choki thi. . .

do chaar din aaraam se guzar gay woh nazar nah aayi. .. ya mein ne tavajja nah di, ke mere mulazim ne bataya : “mein jab dopehar thori der aaraaam ke liye ghar jata hon to koi bachi shokis ke bahar baith kar khayalon mein daal house ke sath khelti hai, aur mujhe aata dekh kar bhaag jati hai ”. . .


“achaaaaa”. .. . aglay din mein ghar jane ki bajaye samnay wali dukaan mein ja kar baith gaya. . .

woh muqarara waqt par aayi aur shokis ke bahar baith kar is ne pehlay idhar udher dekha. phir ishaaron se kabhi “ doll house “mein mojood cheezon ki jagah badalti, guria ko oopar neechay rakhti. .. . isi terhan khailtay khailtay usay mere anay ka ehsas na huwa aur woh bhaag gayi. . .

waqt guzarta gaya. .. woh ab bhi aati. .. aur khail kar chali jati .

mujhe yeh khail acha lagnay laga, kabhi chahta usay khilona day doun, magar phir mein is khail se mahroom ho jata. .. ya phir mujh mein itni ikhlaqi jurrat nahi thi ke mein itna mehanga khilona aik faqeeran ko day deta. . .

mein ne uskaa khilona nahi baicha. .. kayi gahkon ne mujhe khilonay ki mun mangi qeemat bhi dainay ki koshish ki, magar mera dil nahi chaha. .. . mere samnay uskaa mela sa chehra aa jata. .. . aur mein chahtay hue bhi doll house bech nahi saka. .. .

is ne aana band kar diya hai. .. saal bhi to kitney beeet gaye. .. . mere betay ne dool house ko shokis se hataane ke liye kaha to mein ne hataane nahi diya. . .

ho sakta hai. . woh aaye. .. . magar ab to woh barri ho gayi ho gi. . .

ahsasِ e nadamat jeeney nahi deta. .. kaash mein ussay daal house day deta. . .

usay dhoandne ke liye kachi bastii bhi gaya. .. . wahan to sab ki shakalain aik jaisi hain. .. wohi ganday melay chehray aur phatay puranay kapray. .. magar. .. phir aik din woh aagai. . .

meri dukaan mein aik nojawan larki daakhil hui. . sath uskaa' mulazim' bhi tha. . .

yeh guria ghar khareedna hai mujhe. .. woh boli. .. bees hazaar ikhatay karne mein bohat time lag gaya mujhe. . .

par shukar hai tum naay usay baicha nahi. .. is naay ghumzdaa muskurahat ke sath yeh jumla bola. . .

doll house bik chuka tha. .. aur qeemat thi .... mera ta hayat ahsas e nadamat

mazeed stories parhne ke liye yahan click karein