Moti Aur Chor - Hindi Urdu Mein Sabaq Amoz Kahani  - Baccho Ki Kahani - Chalak Sunar Ki Kahani - In Urdu Hindi

پرانے زمانے کى بات ہے ایک سُنار جو کے ممبئی کا رہنے والا تھا لاہور آیا اس کے پاس کافى موتى تھے اس نے وه موتى ایک مجلس میں کھولے اور سب کو دکھانے لگا، اس نے ایک موتى جیب سے نکالا اور لوگوں کو دکھاتے ہوئے بولا کے یہ موتى شب افروز ہے۔ 
*(یعنی رات کو چمکتا ہے)*

    جب اس نے سامان سمیٹا اور اُٹھ کر جانے لگا تو ایک چور جو اسى مجلس میں بیٹھا تھا پوچھنے لگا جناب کہاں کے ارادے ہیں۔
    سُنار نے جواب دیا بمبئی جا رہا ہوں۔
    چور نے کہا:- اتفاق دیکھیں میرا بھی وہیں کا پروگرام ہے چلیں مل کے چلتے ہیں.

        یہ سُنار بھى سمجھ گیا کے یہ میرا ہم سفر نہیں ہے بلکہ اس موتى کے پیچھے ہے، لیکن سمجھدار تھا کہنے لگا آؤ چلتے ہیں. 
    دونوں مل کر چل پڑے سارا دن سفر کیا اور شام کو جب سونے لگے تو چور نے اپنى واسکٹ وغیرہ جو قمیض کے اوپر پہنی ہوئی تھی اُتار کر علیحدہ ایک جگہ پے لٹکا دی، سُنار نے وه موتى اپنى جیب سے نکالا اور نظر بچا کر وه قیمتی موتى اس چور کى جیب میں رکھ دیا اور خود بے فکر ہو کر سو گیا۔

        اب یہ چور رات کو اُٹھا اور اس سنار کى جیب میں اس کا سامان سب دیکھنے لگا لیکن کہیں بھى موتى نہ ملا آخر وه سو گیا، صبح اُٹھتے ہی سُنار نے نظر بچا کر وه قیمتی موتى اس کى جیب سے نکال کر اپنے پاس رکھ لیا، جب چور اُٹھا تو اس نے ناشتہ کرتے ہوئے سُنار سے باتوں باتوں میں پوچھا کے وه تمہارے پاس جو قیمتی موتى تھا وه کہاں ہے رات کو چمک بھى نہیں رہا تھا، 
    سُنار نے موتى جیب سے نکال کر دکھایا اور کہا کے یہ تو میرے پاس ہے۔

        چور حیران ہو گیا کے میں نے اس کى پورى جیب چھان ماری لیکن مجھے یہ نہ ملا لیکن اس نے ابھى جیب سے نکال کر دکھایا خیر آج رات نکال لوں گا، سُنار نے اگلى رات پھر وہی عمل کیا ادھر چور سارى رات ڈھونڈتا رہا لیکن کچھ نہ ملا، صبح کو پھر وہی ماجرا کے موتى سُنار کى جیب سے نکل آتا۔

        یہی عمل تین سے چار دن چلتا رہا بالآخر چور نے ایک صبح سُنار سے کہا کہ میں آپ کا ہم راہی نہیں تھا میں بس آپ کے ساتھ اس موتى کى خاطر تھا آج میں آپ کو اُستاد مانتا ہوں آپ مجھے بتائیں کے آپ یہ موتى رات کو رکھتے کہاں تھے۔
     اس نے کہا میاں تو اوروں کى جیبیں ٹٹولتا رہا کبھى اپنى جیب میں بھی ہاتھ ڈالا ہوتا۔

*سبق:-آج ہمارى مثال اس چور کى سى ہے جو لوگوں کے عیب ڈھونڈتے پھر رہے ہوتے ہیں اور کبھی اپنے گریبان میں جھانک کر دیکھتے تک نہیں۔ ہماری یہ عادت بن چکی ہے کہ ہم ہمیشہ دوسروں کی غلطیاں ہی ڈھونڈتے رہتے ہیں، کبھی اپنے آپ کو نہیں ٹٹولتے۔ ہمیں چاہیئے کہ دوسروں کے عیب تلاش سے بہتر اپنے اعمال کا احتساب کریں۔ جس دن سے ہم نے خود کا احتساب کرنا شروع کردیا دوسروں کے عیب، عیب نہیں رہینگے۔*
●•●•●•●•●•●•●•

Mazeed Kahaniyan Yahan Parhein 
Moti Aur Chor - Sabaq Amoz Islahi Kahani - Naseehat Amoz Urdu Story
Purany Zamany Ki Baat Hai Aik Sunar Jo k Mumbai Ka Rehny Wala Tha Lahore Aya. Us K Paas Kafi Moti Thy. Us Ny Wo Moti Aik Majlis Main Kholy Aur Sab Ko Dikhany Laga. Us Ny Aik Moti Jaib Main Sy Nikala Aur Logo Ko Dikhaty Huwy Bola k Ye Moti Raat Ko Chamakta Hai. Jab Us Ny Saman Sameta Aur Uth Kar Jany Laga To Ek Chor Jo Usi Majlis Main Betha Tha. Wo Poochny Laga Janab Kahan K Irady Hain? Sunar Ny Jawab Dia Mumbai Ja Raha Hun. Chor Ny Kaha Ittefaq Dekhiye Mera B Wohin Ka Program Hai. Chalain Mil Kar Chalty Hain.

Ab Sunar B Samajh Gya K Ye Mera Hamsafar Nai Hai. Ye Is Moti K Peechy Hai Laikin Samajhdar Tha Kehny Laga Ao Chalty Hain. Is Tarah Dono Mil Kar Chal Pary. Sara Din Safar Kia Aur Sham Ko Jab Sony Lagy To Chor Ny Apni Waskit Waghera Jo Qameez k Uper Pehni Hui Thi. Wo Utar Kar Elehda Aik Jagah Par Latka Di. Sunar Ny Wo Moti Apni Jaib Sy Nikala Aur Nazar Bacha k Wo Qeemti Moti Uski Jaib Main Rakh Dia Aur Khud Befikar Ho Kar So Gya. Chor Raat Ko Utha Aur Uski Jaib Uska Saman Sab Dekhny Laga Laikin Kahin B Usko Moti Na Mila Akhir Wo So Gya.

Subah Uthty He Sunar Ny Nazar Bacha Kar Wo Moti Uski Jaib Sy Nikal Kar Apny Paas Rakh Lia. Jab Chor Utha To Us Ny Nashta Karty Karty Sunar Sy Baton Baton Main Poocha k Wo Tumhary Paas Jo Qeemti Moti Tha Wo Kahan Hai? Raat Ko Chamak Nai Raha Tha. Sunar Ny Moti Jaib Sy Nikal Kar Dikhaya Aur Kaha Ye To Mery Paas Hai. Chor Heran Ho Gya K Main Ny Iski Poori Jaib Chaan Maari Laikin Mujy To Nai Mila Laikin Is Ny Jaib Sy Nikal Kar Dikha Dia. Khair Aaj Raat Nikal Lu Ga. Sunar Ny Agli Raat Phir Wohi Amal Kia. Udhar Chor B Saari Raat Dhondta Raha Laikin Kuch Na Mila. Subah Ko Phir Wohi Majra k Moti Sunar Ki Jaib Sy Nikal Aya. Ye Majra 3 4 Din Aisy He Chalta Raha. Akhir Chor Ny Aik Din Sunar Sy Kaha k Main Apka Raahi Nai Tha. Main To Is Moti K Peechy Tha. Aapko Main Ustad Manta Hun. Btayen Aap Ye Moti Kahan Rakha Karty Thy? Sunar Ny Kaha: Mian! Tu Aurron ki Jaibain To Check Karta Raha Kabi Apni Jaib Main B Hath Dala Hota.

Pyary Dosto: Aaj Hamari Misaal Us Chor Ki Jaisi Hai Jo Logo K Aib Dhondta Phir Raha Hai Aur Jo Dar Dar Py Rizaq Maangta Phir Raha Hai. Kash Hamari Nazar Kabi Apni Taraf B Mur Jaye.

Mazeed Kahaniyan Yahan Parhein