Kunwara Hone Ke Fayde - Kunware Doston Ki Nazar - Urdu Hindi Jokes - کنوارے دوستوں کی نظر- کنوارہ ہونے کے فائدے - مزاحیہ تحریر
very-funny-post-kunwara
عطا الحق قاسمی صاحب کہتے ہیں کہ کنوارے بندے کو یہ بڑا فائدہ ہے کہ وہ بیڈ کے دونوں طرف سے اتر سکتا ہے
ٹھیک کہتے ہیں ‘ میں تو کہتا ہوں کنوارے بندے کو یہ بھی بڑا فائدہ ہے کہ وہ رات کو گلی میں چارپائی ڈال کر بھی سو سکتا ہے‘‘ کمرے کی کھڑکیاں ہر وقت کھلی رکھ کر تازہ ہوا کا لطف اٹھا سکتا ہے‘رات کو لائٹ بجھائے بغیر سوسکتاہے۔۔۔
میں جب بھی کسی کنوارے کو دیکھتا ہوں حسد میں مبتلا ہوجاتا ہوں‘
شادی شدہ بندے کی یہ بڑی پرابلم ہے کہ
 وہ کنوارہ نہیں ہوسکتا‘ البتہ کنوارہ بندہ جب چاہے شادی شدہ ہوسکتاہے۔
ہمارے ہاں کنوارہ اُسے کہتے ہیں جس کی زندگی میں کوئی عورت نہیں ہوتی‘ حالانکہ یہ بات شادی شدہ بندے پر زیادہ فٹ بیٹھتی ہے‘ کنوارے تو اِس دولت سے مالا مال ہوتے ہیں۔
فی زمانہ جو کنوارہ ہے وہ زندگی کی تمام رعنائیوں سے لطف اندوز ہونے کا حق رکھتا ہے‘
وہ کسی بھی شادی میں سلامی دینے کا مستحق نہیں ہوتا‘
اُس کا کوئی سُسرال نہیں ہوتا‘
اُس کے دونوں تکیے اس کی اپنی ملکیت ہوتے ہیں‘
اُسے کبھی تنخواہ کا حساب نہیں دینا پڑتا‘
اُسے دوستوں میں بیٹھے ہوئے کبھی فون نہیں آتا کہ ’’آتے ہوئے چھ انڈے اور ڈبل روٹی لیتے آئیے گا‘‘۔
اُسے کبھی موٹر سائیکل پر کیرئیر نہیں لگوانا پڑتا‘
اُسے کبھی دوپٹہ رنگوانے نہیں جانا پڑتا‘
اُس کا کوئی سالا نہیں ہوتا لہذا اُس کی موٹر سائیکل میں پٹرول ہمیشہ پورا رہتا ہے‘
اُسے کبھی روٹیاں لینے کے لیے تندور کے چکر نہیں لگانے پڑتے‘
اُسے کبھی فکر نہیں ہوتی کہ کوئی اُس کا چینل تبدیل کرکے ’’میرا سلطان‘‘ لگا دے گا‘
اُس کے ٹی وی کا ریموٹ کبھی اِدھر اُدھر نہیں ہوتا‘
اُسے کبھی ٹی سیٹ خریدنے کی فکر نہیں ہوتی‘
اسے کبھی پردوں سے میچ کرتی ہوئی بیڈ شیٹ نہیں لینی پڑتی‘
اسے کبھی کہیں جانے سے پہلے اجازت نہیں لینی پڑتی‘
اسے کبھی اپنے موبائل میں خواتین کے نمبرزمردانہ ناموں سے save نہیں کرنے پڑتے‘
اسے کبھی کپڑوں کی الماری میں سے اپنی شرٹ نہیں ڈھونڈنی پڑتی‘
اسے کبھی انارکلی بازار میں مارا مارا نہیں پھرنا پڑتا‘
اسے کبھی بیڈ روم کے دروازے کا لاک ٹھیک کروانے کی ضرورت پیش نہیں آتی‘
اسے کبھی ٹوتھ پیسٹ کا ڈھکن بند نہ کرنے کا طعنہ نہیں سننا پڑتا‘
اسے کبھی دو جوتیاں نہیں خریدنی پڑتیں‘
اسے کبھی بیوٹی پارلر کے باہر گھنٹوں انتظار میں نہیں کھڑا ہونا پڑتا‘
اسے کبھی دیگچی کو ہینڈل نہیں لگوانے جانا پڑتا‘
اسے کبھی اپنے براؤزر کی ہسٹری ڈیلیٹ کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی‘
اسے کبھی کسی کو منانا نہیں پڑتا‘
اسے کبھی کسی کی منتیں نہیں کرنی پڑتیں
اسے کبھی آٹے دال کے بھاؤ معلوم کرنے کی ضرورت نہیں پیش آتی‘
اسے کبھی موٹر سائیکل کے دونوں شیشے نہیں لگوانے پڑتے‘
اسے کبھی سٹاپ پر موٹر سائیکل گاڑیوں سے پرے نہیں روکنی پڑتی‘
اسے کبھی نہیں پتا چلتا کہ اس کا کون سا رشتہ دار کمینہ ہے‘
اسے کبھی اپنے گھر والوں کی منافقت اور برائیوں کا علم نہیں ہونے پاتا‘
اسے کبھی اپنے گھرکے ہوتے ہوئے کرائے کا گھر ڈھونڈنے کی ضرورت پیش نہیں آتی‘
اسے کبھی بہنوں بھائیوں سے ملنے میں جھجک محسوس نہیں ہوتی‘
اسے کبھی کسی کے آگے ہاتھ نہیں جوڑنے پڑتے‘
اسے کبھی ماں کو غلط نہیں کہنا پڑتا‘
اس کی کنگھی اور صابن پر کبھی لمبے لمبے بال نہیں ملتے‘
اسے کبھی بدمزہ کھانے کو اچھا نہیں کہنا پڑتا‘
اسے کبھی میٹھی نیند کے لیے ترسنا نہیں پڑتا‘
اسے کبھی سردیوں کی سخت بارش میں نہاری لینے نہیں نکلنا پڑتا‘
اسے کبھی کمرے سے باہر جاکے سگریٹ نہیں پڑتا‘
اسے کبھی چھت کے پنکھے صاف نہیں کرنے پڑتے‘
اسے کبھی ’’پھول جھاڑو‘‘ خریدنے کی اذیت سے نہیں گذرنا پڑتا‘
اسے کبھی پیمپرزنہیں خریدنے پڑتے
اسے کبھی کھلونوں کی دوکانوں کے قریب سے گذرتے ہوئے ڈر نہیں لگتا‘
اسے کبھی صبح ساڑھے سات بجے اٹھ کر کسی کو سکول چھوڑنے نہیں جانا پڑتا
اسے کبھی اتوار کا دن چڑیا گھر میں گذارنے کا موقع نہیں ملتا
اسے کبھی باریک کنگھی نہیں خریدنی پڑتی‘
اسے کبھی سستے آلوخریدنے کے لیے چالیس کلومیٹر دور کا سفر طے نہیں کرنا پڑتا‘
اسے کبھی الاسٹک نہیں خریدنا پڑتا‘
اسے کبھی سبزی والے سے بحث نہیں کرنا پڑتی‘
اسے کبھی فیڈر اور چوسنی نہیں خریدنی پڑتی‘
اسے کبھی سالگرہ کی تاریخ یاد نہیں رکھنی پڑتی‘
اسے کبھی پیٹی کھول کر رضائیوں کو دھوپ نہیں لگوانی پڑتی‘
اسے کبھی دال ماش اور کالے ماش میں فرق کرنے کی ضرورت نہیں پیش آتی‘
اسے کبھی نیل پالش ریموور نہیں خریدنا پڑتا‘
اسے کبھی اپنی فیس بک کا پاس ورڈ کسی کو بتانے کی ضرورت پیش نہیں آتی‘
اسے کبھی گھر آنے سے پہلے موبائل کے سارے میسجز ڈیلیٹ کرنے کی فکر نہیں ہوتی‘
اسے کبھی ہیرکلپ نہیں خریدنا پڑتے‘
اسے کبھی موٹر کا پٹہ بدلوانے کی فکر نہیں ہوتی‘
اسے کبھی اچھی کوالٹی کے تولیے لانے کی ٹینشن نہیں ہوتی‘
اسے کبھی کسی کے خراٹے نہیں سننے پڑتے‘
اسے کبھی نیند کی گولیاں نہیں خریدنی پڑتیں ‘
اسے کبھی سکول کی فیس ادا کرنے کا کارڈ نہیں موصول ہوتا‘
اسے کبھی کرکٹ میچ کے دوران یہ سننے کو نہیں ملتا کہ ’’آفریدی اتنے گول کیسے کرلیتا ہے؟‘‘ ۔۔۔
کسی سینئر کنوارے کا شعر ہے کہ۔۔۔!!!
’’ہم سے بیوی کے تقاضے نہ نباہے جاتے
ورنہ ہم کوبھی تمنا تھی کہ بیاہے جاتے.
kunware doston ki nazar
At ul Haq Qasmi sahib kehte hain ke kunware bande ko yeh bara faida hai ke woh bed ke dono taraf se utar sakta hai
theek kehte hain' mein to kehta hon kunware bande ko yeh bhi bara faida hai ke woh raat ko gali mein charpayee daal kar bhi so sakta hai' ' kamray ki khirkiyan har waqt khuli rakh kar taaza hawa ka lutaf utha sakta hai' raat ko light bujhaye baghair so skta hai
mein jab bhi kisi kunware ko daikhta hon hasad mein mubtala hojata hon '
shadi shuda bande ki yeh barri prablm hai ke

woh kunwaara nahi ho sakta' Albata kunwaara bandah jab chahay shadi shuda hosktahe .

hamaray haan kunwaara ussay kehte hain jis ki zindagi mein koi aurat nahi hoti' halaan ke yeh baat shadi shuda bande par ziyada fit bithti hai' kunwaray to iss doulat se malaa maal hotay hain .
fi zamana jo kunwaara hai woh zindagi ki tamam rahnayo se lutaf andoz honay ka haq rakhta hai '
woh kisi bhi shadi mein salami dainay ka mustahiq nahi hota '
uss ka koi SASURAL nahi hota '
uss ke dono takiye is ki apni malkiat hotay hain '
ussay kabhi thankhowa ka hisaab nahi dena parta '
ussay doston mein baithy hue kabhi phone nahi aata ke
'' atay hue 6 anday aur double roti letay aayiyae ga' ' .
ussay kabhi motorcycle par career nahi lguana parta '
ussay kabhi dupatta rangwane nahi jana parta '
uss ka koi sala nahi hota lehaza uss ki motorcycle mein petrol hamesha poora rehta hai '
ussay kabhi rotian lainay ke liye tandoor ke chakkar nahi laganay parte '
ussay kabhi fikar nahi hoti ke koi uss ka channel tabdeel karkay' ' mera Sultan ' ' laga day ga '
uss ke TV ka remote kabhi idher udhar nahi hota '
ussay kabhi tea set kharidnay ki fikar nahi hoti '
usay kabhi pardon se match karti hui bed sheet nahi leni
usay kabhi kahin jane se pehlay ijazat nahi leni padtee '
usay kabhi apne mobile mein khawateen ke numbers mardana naamo se save nahi karne parte '
usay kabhi kapron ki almaari mein se apni shirt nahi dhoondni padtee '
usay kabhi anarkali bazaar mein mara mara nahi phirna parta '
usay kabhi bed room ke darwazay ka lock theek karwanay ki zaroorat paish nahi aati '
usay kabhi toth paste ka dhakkan band nah karne ka tana nahi sunna parta '
usay kabhi do jotiyan nahi khridni prhtin '
usay kabhi beauty parler ke bahar ghanton intzaar mein nahi khara hona parta '
usay kabhi daigchi ko handle nahi lagwanay jana parta '
usay kabhi apne browser ki history delete karne ki zaroorat nahi hoti '
usay kabhi kisi ko manana nahi parta '
usay kabhi kisi ki mannatain nahi karni prhtin
usay kabhi aattay daal ke bhao maloom karne ki zaroorat nahi paish aati '
usay kabhi motorcycle ke dono sheeshay nahi lagwanay parte '
usay kabhi stap par motorcycle gariyon se paray nahi rokni padtee '
usay kabhi nahi pata chalta ke is ka kon sa rishta daar kamina hai '
usay kabhi apne ghar walon ki munafqat aur buraiyon ka ilm nahi honay paata '
usay kabhi apne ghr ke hotay hue karaye ka ghar dhoandne ki zaroorat paish nahi aati '
usay kabhi behnoon bhaiyon se milnay mein jhijak mehsoos nahi hoti '
usay kabhi kisi ke agay haath nahi jornay parte '
usay kabhi maa ko ghalat nahi kehna parta '
is ki kanghi aur sabun par kabhi lambay lambay baal nahi mlitay '
usay kabhi bad mazah khanay ko acha nahi kehna parta '
usay kabhi meethi neend ke liye tarasnaa nahi parta '
usay kabhi sardiyoon ki sakht barish mein nehari lainay nahi niklana parta '
usay kabhi kamray se bahar jaake cigrette nahi parta '
usay kabhi chhat ke pankhe saaf nahi karne parte '
usay kabhi' ' phool jharoo' ' khardney ki aziat se nahi gzrna parta '
usay kabhi pampers khardney parte
usay kabhi khilonon ki dukanon ke qareeb se gzrte hue dar nahi lagta '
usay kabhi subah saarhay saat bajay uth kar kisi ko shool chhornay nahi jana parta
usay kabhi itwaar ka din chirya ghar mein guzarnay ka mauqa nahi milta
usay kabhi bareek kanghi nahi khareedny padtee '
usay kabhi sastay aaloo kharedny  ke liye chalees 40 kilometer daur ka safar tey nahi karna parta '
usay kabhi elastic nahi khareedna parta '
usay kabhi sabzi walay se behas nahi karna padtee '
usay kabhi feeder aur chusni nahi khridni padtee '
usay kabhi saalgirah ki tareekh yaad nahi rakhni padtee '
usay kabhi paiti khol kar rzayyon ko dhoop nahi lagwani padtee '
usay kabhi daal maash aur kalay maash mein farq karne ki zaroorat nahi paish aati '
usay kabhi neel polish remover nahi khareedna parta '
usay kabhi apni Facebook ka password kisi ko bitanay ki zaroorat paish nahi aati '
usay kabhi ghar anay se pehlay mobile ke saaray massages delete karne ki fikar nahi hoti '
usay kabhi hair clip nahi khareedna parte '
usay kabhi motor ka patta badalwane ki fikar nahi hoti '
usay kabhi achi quality ke toliye laane ki tension nahi hoti '
usay kabhi kisi ke kharatay nahi suneney parte '
usay kabhi neend ki golian nahi khareedny prhtin '
usay kabhi school ki fees ada karne ka card nahi masool hota '
usay kabhi cricket match ke douran yeh suneney ko nahi milta ke' ' afridi itnay goal kaisay kar leta hai ?' '.
kisi senior kunware ka shehr  hai ke. ..! ! !

'' hum se biwi ke taqazay nahi nibahe jatay
warna hum ko bhi tamanna thi ke byahe jatay ..